دہلی کی سرحدوں پر ایک بار پھر ’کسان تحریک‘ پکڑے گی رفتار!

سِکھ کسان لیڈر جسبیر سنگھ وِرک کا کہنا ہے کہ مختلف ریاستوں سے کسان کنبوں کی کئی خواتین حمایت میں سامنے آئی ہیں اور کسان تحریک میں سرگرمی کے ساتھ شامل ہوئی ہیں۔

کسان تحریک / تصویر یو این آئی
کسان تحریک / تصویر یو این آئی
user

قومی آوازبیورو

بھارتیہ سِکھ سنگٹھن کے سربراہ جسبیر سنگھ وِرک نے مرکز کے متنازعہ زرعی قوانین کے خلاف دہلی کی سرحدوں پر جاری کسان تحریک کو ایک بار پھر رفتار دینے پر زور دیا ہے۔ انھوں نے کہا ہے کہ دہلی کی سرحدوں پر کسانوں کی طاقت پھر سے بڑھانے کی ضرورت ہے تاکہ مرکزی حکومت پر دباؤ بڑھایا جا سکے۔

27 ستمبر کو ’بھارت بند‘ کے اعلان سے قبل صحافیوں سے بات کرتے ہوئے جسبیر سنگھ نے کہا کہ ’’خواتین نے اب تک کسان تحریک میں سرگرم کردار نبھایا ہے اور وہ تحریک کی ریڑھ ہیں۔ اب مزید لوگوں کو تحریک میں شامل ہونا چاہیے۔‘‘ انھوں نے یاد دلایا کہ خراب موسم میں کسانوں کے جہد مسلل اور بڑے پیمانے پر احتجاجی مظاہرہ کے دوران شہید ہونے والے لوگوں کی قربانیاں رائیگاں نہیں جانی چاہئیں۔


یو پی سے تعلق رکھنے والے سکھ لیڈر جسبیر سنگھ نے مردوں سے بھی اپیل کی ہے کہ وہ بڑی تعداد میں دہلی کی سرحدوں پر پہنچیں اور آنے والی 27 تاریخ کو ’بھارت بند‘ کامیاب بنائیں۔ انھوں نے اس دوران یہ جانکاری بھی دی کہ ’’مختلف ریاستوں سے تعلق رکھنے والے کسان کنبوں کی کئی خواتین حمایت میں سامنے آئی ہیں، اور تحریک میں سرگرمی کے ساتھ شامل بھی ہوئی ہیں۔ احتجاجی مظاہرہ کے مقامات پر ان کی موجودگی ایک کنبہ کی طرح ہمارے اتحاد کو ظاہر کرتی ہے اور انتظامیہ کو پتہ ہونا چاہیے کہ ہم اپنے مطالبات کو لے کر بہت سنجیدہ ہیں۔‘‘

اپنی بات کو آگے بڑھاتے ہوئے جسبیر سنگھ نے کہا کہ ’’ہم نے مظفر نگر میں حال ہی میں کسان مہاپنچایت کو اپنی پوری حمایت دی اور اب ہم چاہتے ہیں کہ 27 ستمبر کو ’بھارت بند‘ بھی کامیاب ہو۔ حالانکہ لوگوں کو ’بند‘ کے دوران پرامن طریقے سے احتجاجی مظاہرہ کرنا چاہیے اور ان کے احاطوں کو بند رکھنا چاہیے۔‘‘ کسان لیڈر نے یہ بھی کہا کہ خصوصاً کسانوں کو کسی بھی طرح کے اکساوے اور تشدد سے دور رہنا چاہیے۔ انھوں نے بتایا کہ وہ مختلف ریاستوں کا سفر کر رہے ہیں اور ہر طبقہ سے جڑے لوگوں کے ساتھ میٹنگوں کا دور بھی جاری ہے۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔