ہم اور کتنا گریں گے!

ہم کیوں نہیں سمجھ پاتے کہ ’وندے ماترم‘ مسلمانوں کے لیے تکلیف دہ پرتشدد یادوں سے وابستہ ہے۔ ’بھارت میں رہنا ہے تو وندے ماترم کہنا ہے‘ ایک مشہور نعرہ ہے جس میں تمام ہندوؤں کو کوئی دقت نظر نہیں آتی!

<div class="paragraphs"><p>ہندوتوا تنظیم کے حامی / Getty Images</p></div>

ہندوتوا تنظیم کے حامی / Getty Images

user

اپوروانند

جے ہند! وندے ماترم! - پٹنہ لے جانے والی پرواز کے پائلٹ نے ہمیں یہ معلومات دینے کے بعد کہ جہاز اب 35 ہزار فٹ کی بلندی سے نیچے آ رہا ہے، ان الفاظ کے ساتھ اپنا خطاب ختم کیا۔ وہ الفاظ مجھے ایک مختلف قسم کی گہرائی میں لے جانے کا احساس دلا گئے۔ یہ نہ تو طیارے کے اترنے جیسا آسان تھا اور نہ ہی محفوظ۔ یہ ایک مختلف قسم کا 'ٹربولنس' تھا جو مجھے ہلا رہا تھا۔ پھر میری بے خودی ٹوٹی اور میرا دھیان میرے ساتھی مسافروں کی طرف گیا کہ کیا وہ بھی ایسا ہی محسوس کر رہے ہیں؟ اور یہ کہ مجھے خود کو محفوظ رکھنے کے لیے کس قسم کی حفاظتی بیلٹ کی ضرورت ہے؟

مجھے عملے سے پوچھنے کی خواہش ہوئی کہ 'جے ہند' کے مقبول سلام میں 'وندے ماترم' شامل کرنے کی ضرورت کیا تھی؟ لیکن پھر میں نے سوچا کہ کہیں میں ضرورت زیادہ ردعمل تو ظاہر نہیں کر رہا؟ اس 26 جنوری کو، جب میری یونیورسٹی کالونی میں پرچم کشائی کے بعد 'وندے ماترم' کا نعرہ لگایا گیا، تب تو میں نے مخالفت نہیں کی! کیوں؟ کیا میں اب زیادہ حساس ہو گیا ہوں؟

ہم کیوں نہیں سمجھ سکتے کہ 'وندے ماترم' مسلمانوں کے لیے دردناک اور پرتشدد یادوں سے وابستہ ہے۔ ’بھارت میں رہنا ہے، تو وندے ماترم کہنا ہے‘ ایک مقبول نعرہ ہے جس میں بہت سے ہندوؤں کو کوئی مسئلہ نظر نہیں آتا۔

ایک ہی طیارے میں بیٹھے ہوئے ہم احساسات کے دو باہمی خصوصی علاقوں میں تھے۔ کیا یہ تقسیم نارمل ہے؟ یہ سوچتے ہوئے مجھے جے پور کا ایک واقعہ یاد آ گیا۔ حکمراں بی جے پی کے ایک ایم ایل اے نے لڑکیوں کے ایک سرکاری اسکول کا دورہ کیا جس میں مسلم لڑکیوں کی کافی تعداد تھی۔ موقع غالباً اسکول کے سالانہ دن کا تھا جس میں والدین بھی موجود تھے۔ ایم ایل اے کی خواہش تھی کہ لڑکیاں بھی ان ساتھ ’بھارت ماتا کی جئے‘ کا نعرہ لگائیں لیکن وہ یہیں نہیں رکے، انہوں نے ’سرسوتی ماتا کی جئے‘ کا نعرہ لگایا اور لڑکیوں سے اسے دہرانے کی توقع کی۔ لیکن چاروں طرف خاموشی! بپھرے ایم ایل اے نے مزید جوش پیدا کرتے ہوئے ’جے شری رام' کا نعرہ لگایا، مسلمان لڑکیاں خاموش رہیں۔ پھر کیا تھا، ایم ایل اے نے طالبات کو حجاب پہننے کی اجازت دینے پر پرنسپل پر تنقید کی۔ بعد میں لڑکیوں نے ایم ایل اے کے خلاف کھل کر احتجاج کیا اور واضح کیا کہ حجاب پہننا ان کا حق ہے۔ دوسری طرف، بی جے پی کے لوگوں نے ایم ایل اے کے اس مطالبے کی حمایت کی کہ اسکولوں میں حجاب پر پابندی ہونی چاہیے۔


یہ بہت حوصلہ افزا ہے کہ لڑکیوں نے اپنے حقوق کے لیے کھڑے ہو کر عوامی سطح پر احتجاج کرنے کا حوصلہ دکھایا۔ وہ اپنے پرنسپل کی توہین پر ناراض ہیں۔ وہ کہتی ہیں کہ وہ پورے 5 دن تک سرسوتی وندنا گاتی ہیں، پھر جمعہ کو پڑھی جانے والی دعا میں مسئلہ کیوں ہے؟ مجھے بہار کے ایک سیاستدان دوست سے بات چیت یاد ہے۔ انہوں نے اپنے گاؤں میں ایک اسکول بنایا ہے۔ انہیں والدین کی جانب سے شکایات موصول ہوئیں کہ اسکول میں دعا کے طور پر اسلامی نظم پڑھی جاتی ہے۔ یہ اور بات ہے کہ وہ نہیں جھکے اور ان کے اسکول میں آج وہی دعا پڑھی جاتی ہے۔ لیکن وہ بے چین رہے کہ مسلم شناخت والی کسی چیز سے اتنی نفرت کیوں؟

جے پور کے معاملہ کی طرف واپس آتے ہیں۔ اس واقعہ کے اسکول کی اجتماعی اور مشترکہ زندگی پر کیا اثرات مرتب ہوتے ہیں اس پر نظر ڈالیں - معلوم ہوا کہ ہندو لڑکیاں اب اپنی مسلمان ہم جماعتوں سے کہہ رہی ہیں کہ اگر وہ حجاب پہننے پر اصرار کریں گی تو وہ بھگوا پہن کر آئیں گی۔ وہ ہندو لڑکیاں جو کبھی زعفرانی اسٹال یا اسکارف نہیں پہنتیں اب حجاب کے رد عمل میں ایک نئی پریکٹس شروع کرنے کی دھمکی دے رہی ہیں! پہلے ایسا نہیں تھا۔ انہیں حجاب سے کوئی مسئلہ نہیں تھا۔ اب وہ محسوس کرتی ہیں کہ انہیں اپنے ہم جماعتوں کے ساتھ اپنی شناخت کے ساتھ مقابلہ کرنا چاہیے۔

بات یہ ہے کہ حساسیت کا ایک ہندو دائرہ پیدا کیا جا رہا ہے جو دوسرے دائرے کے مخالف ہے چاہے مسلمان ہو یا عیسائی۔ اگر وہ گوشت کھاتے ہیں تو سبزی خور برادری کو اسے ایک مسئلہ بنانا پڑے گا۔ اگر وہ کرسمس مناتے ہیں تو تلسی پوجا کی جاتی ہے۔ ویلنٹائن ڈے کے جوابی نقطہ کے طور پر، لوگوں سے کہا جاتا ہے کہ وہ اسے 'والدین کے دن' کے طور پر منائیں۔ ہندو مسجد کے سامنے موسیقی بجانے یا اشتعال انگیز نعرے لگانے کو یقینی بناتے ہیں۔ ہم نے ہندوؤں کو مسلمانوں کی نماز پڑھنے سے پہلے بلند آواز میں ہنومان چالیسہ پڑھتے دیکھا ہے۔ ہنومان چالیسہ کی اجتماعی تلاوت کبھی بھی ہندوؤں کی روزمرہ کی زندگی کا اس طرح حصہ نہیں رہی جس طرح نماز پڑھنا مسلمانوں کے روزمرہ کے معمول میں رہا ہے۔ لیکن ہندو مسلمانوں کو ڈرانے کے لیے ایسا کر رہے ہیں۔ ہندوؤں کا ایک مسلمان کو گھیر کر ہنومان چالیسہ پڑھنا ایک عجیب منظر ہے۔ یہ ہندوؤں کے ایک بڑے طبقے کی شیطانی خواہش کا اظہار بھی ہے کہ وہ مسلمانوں کو امن سے نہ رہنے دیں۔ کسی کی عبادت میں خلل ڈالنا گناہ سمجھا جاتا ہے لیکن سنگھی ہندوؤں کے لیے یہ سب سے مقدس عمل ہے۔

ہم نے کبھی مسلمانوں یا عیسائیوں کو اپنے اہم دن اس طرح مناتے ہوئے نہیں سنا یا دیکھا ہے کہ ہندوؤں کو ذلت یا تکلیف کا سامنا کرنا پڑے۔ وہ طاقت کا مظاہرہ کرنے یا اپنے مذہبی جلوسوں میں ہندو مخالف نعرے لگانے کے لیے کسی مندر کے سامنے نہیں رکتے۔ اس لیے یہ نفرت یا علیحدگی کا دو طرفہ معاملہ نہیں ہے۔


یہ تقسیم دوسرے طریقوں سے بھی نظر آتی ہے۔ کرناٹک سے قومی پرچم اور ہنومان پرچم کو لے کر تنازعہ کی خبریں آ رہی ہیں۔ وہی سیاسی جماعت جس نے لال قلعہ کے ایک کھمبے پر نشان صاحب کے لہرانے پر ہنگامہ برپا کیا تھا، وہ چاہتی ہے کہ قومی پرچم کے لیے مخصوص کھمبے پر ہنومان کا جھنڈا لہرایا جائے اور وہ اس پر پورے ملک میں احتجاج کر رہی ہے۔

حساس علاقوں میں یہ تقسیم منی پور میں سب سے زیادہ خراب صورت حال میں ہے۔ یہاں ایک کوکی زون ہے اور اس کے بالمقابل میتئی زون ہے۔ ایک بار پھر یہ بی جے پی حکومت کی پیدا کردہ کی گئی تقسیم ہے۔ آسام میں ہم وزیر اعلیٰ کو روزانہ یہ دعویٰ کرتے سنتے ہیں کہ میاں مسلمان آسامی شناخت سے تعلق نہیں رکھتے۔ وہ ایک آئینی عہدہ پر فائز شخص ہیں جو اپنے ہی لوگوں کو آسام کے لوگوں سے الگ کر رہے ہیں۔

ایودھیا میں منہدم کی گئی بابری مسجد کی زمین پر ریاستی سرپرستی میں اور بی جے پی کے زیر اہتمام نئے رام مندر کے افتتاح کے حالیہ ملک گیر جشن نے معاشرے کی عام زندگی میں اس خلیج کو مزید وسیع کر دیا ہے۔ اس مندر کے حوالے سے ہندو عوام کا جوش و خروش میڈیا اور حکومت سے متاثر ہوا۔ اس موقع پر اپارٹمنٹوں اور کالونیوں میں روشن فلیٹوں اور مکانات میں سے ان گھروں کی نشاندہی کی جا سکتی تھی جو تاریکی میں ڈوبے ہوئے تھے۔

اپارٹمنٹوں، کالجوں اور اداروں میں مندر کے افتتاح کی خوشی میں چندہ جمع کیا گیا۔ بہت سے لوگ تھے جو اس کے لیے چندہ دینے پر مجبور تھے۔ مسلمانوں کو اس میں شرکت پر مجبور کیا گیا۔ وزیر اعظم نے اسے 500 سالہ ذہنی غلامی کا خاتمہ قرار دیا۔ کابینہ نے اسے قوم کی روح کی نجات قرار دیا۔ یہ کہنے کی ضرورت نہیں کہ یہ جذبات ملک کے ایک بہت بڑے طبقے سے وابستہ نہیں ہیں۔ اس صورت حال میں، کیا یہ لوگوں معنی رکھتے ہیں؟

جب میں اپنی قوم کے بارے میں سوچتا ہوں تو یہ وہ خیالات ہیں جو مجھ پر قابض ہوتے ہیں۔ ہمیں انسان بنانے کے 75 سالہ سفر میں ہم دیکھتے ہیں کہ ہندوؤں کی ایک بڑی آبادی نے مسلمانوں اور عیسائیوں سے منہ موڑ لیا ہے۔ ان کے دل سخت ہو گئے ہیں۔ انہیں یہ یقین دلایا گیا ہے کہ وہ اس ذلت کا بدلہ لینے کے لیے لڑ رہے ہیں جو ان کے آباؤ اجداد کو مسلم آباؤ اجداد کے ہاتھوں برداشت کرنا پڑی۔

میری واپسی کی پرواز اسی ایئرلائنز کی تھی اور اس بار ’ویسا‘ کوئی اعلان نہیں ہوا۔ نہ جانے کب ہم کس بلندی پر پہنچے، کب کس بلندی سے اترنے لگے۔ پائلٹ نے جہاز کے عملے سے کہا کہ وہ لینڈنگ کی تیاری کریں۔ میں نے سکون کی سانس لی لیکن کیا میں اس سے بچ نکلا ہوں؟

Follow us: Facebook, Twitter, Google News

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔


;