آذربائیجان-ارمینیا جنگ میں شدت، 240 سے زائد شہری ہلاک

اسرائیل کی جانب سے آذربائیجان کو ہتھیاروں کی فراہمی پر اسرائیل اور آرمینیا کے تعلقات میں تلخی آگئی ہے۔اسرائیل آذربائیجان کو اسلحہ فراہم کرنے والا سب سے بڑا ملک ہے۔

تصویر سوشل میڈیا
تصویر سوشل میڈیا
user

یو این آئی

باکو: ناگورنو-کاراباخ میں آرمینیا اور آذربائیجان کی افواج کے درمیان جاری جنگ میں مزید شدت اور دونوں ملکوں کے بڑے شہروں پر گولہ باری نے شہریوں کو انتہائی خوفزدہ کر دیا ہے۔ جنگ میں اب تک 240 سے زائد لوگ ہلاک ہوچکے ہیں۔ متنازع خطے میں دونوں ملکوں کے درمیاں تازہ تصادم 27 ستمبر کو شروع ہوئی تھیں اور پہلے روز کم ازکم 23 لوگ مارے گئے تھے۔

دوسری طرف اسرائیل کی جانب سے آذربائیجان کو ہتھیاروں کی فراہمی پر اسرائیل اور آرمینیا کے تعلقات میں تلخی آگئی ہے۔اسرائیل ویسے بھی آذربائیجان کو اسلحہ فراہم کرنے والا سب سے بڑا ملک ہے لیکن تاہم حالیہ تنازعے کے دوران اسرائیلی ہتھیاروں کی فراہمی نے آرمینیا کو ناراض کردیا ہے۔ اسرائیلی میڈیا کے مطابق آذربائیجان کو اسرائیل کی طرف سے فراہم مسلح ڈرون کی وجہ سے خطے میں طاقت کا توازن قائم ہے۔ اس میں 'خودکش' ڈرون بھی شامل ہیں جو دشمن کے ٹھکانوں کو تباہ کرنے میں کارگر ثابت ہوتے ہیں۔

خیال رہے کہ آذربائیجان نے اسرائیل کو اب تک تسلیم نہیں کیا، تاہم دونوں کے درمیان تجارتی و دفاعی تعلقات قائم ہیں۔ دوسری طرف آرمینیا کے 1992 سے ہی اسرائیل سے سفارتی تعلقات تھے۔ گزشتہ ماہ 17ستمبر کو تل ابیب میں آرمینیا کا سفارت خانہ بھی کھولا گیا تھا۔ بہر حال، ناگورنو-کاراباخ کا علاقہ 4 ہزار 400 مربع کلومیٹر پر پھیلا ہوا ہے اور 50 کلومیٹر آرمینیا کی سرحد سے جڑا ہے، آرمینیا نے مقامی جنگجوؤں کی مدد سے آذر بائیجان کے علاقے پر خطے سے باہر سے حملہ کرکے قبضہ کرلیا تھا۔

next