’بنگال میں 8 مراحل میں ووٹنگ کیوں، کس کو فائدہ پہنچانے کی ہو رہی کوشش‘

مغربی بنگال کی وزیر اعلیٰ ممتا بنرجی کا کہنا ہے کہ ’’الیکشن کمیشن نے وزیر اعظم نریندر مودی اور امت شاہ کے دورے کے مطابق تاریخوں کا اعلان کیا ہے۔ جو بی جے پی نے کہا الیکشن کمیشن نے وہی کیا ہے۔‘‘

ممتا بنرجی، تصویر آئی اے این ایس
ممتا بنرجی، تصویر آئی اے این ایس
user

تنویر

چیف الیکشن کمشنر سنیل اروڑا نے 4 ریاستوں اور ایک مرکز کے زیر انتظام علاقہ میں اسمبلی انتخابات کے لیے تاریخوں کا اعلان کر دیا ہے، لیکن مغربی بنگال میں 8 مراحل میں ووٹنگ کرائے جانے کے فیصلہ پر انگلیاں اٹھنی شروع ہو گئی ہیں۔ مغربی بنگال کی وزیر اعلیٰ ممتا بنرجی نے الیکشن کمیشن کے ذریعہ انتخابات کی تاریخوں کا اعلان کیے جانے کے بعد ایک پریس کانفرنس کیا جس میں انھوں نے حیرانی ظاہر کرتے ہوئے سوال اٹھایا کہ آخر بنگال میں 8 مراحل میں ووٹنگ کیوں ہو رہی ہے، اور ایسا کس کو فائدہ پہنچانے کے لیے کیا گیا ہے۔

پریس کانفرنس میں ممتا بنرجی الیکشن کمیشن کی منشا پر سوال اٹھاتے ہوئے کہا کہ ایسا لگتا ہے جیسے تاریخوں کا تعین بی جے پی کے حساب سے کیا گیا ہے، اور اگر ایسا نہیں ہے تو پھر ایک ہی ضلع میں تین مراحل میں انتخابات کیوں کروائے جا رہے ہیں۔ انھوں نے کہا کہ ’’اس بار مغربی بنگال میں آٹھ مراحل میں کھیل کھیلا جائے گا۔ بی جے پی کے کہنے پر الیکشن کمیشن نے ایسا کیا ہے۔ لیکن بنگال پر بنگالی ہی راج کرے گا، کسی باہری کو گھسنے نہیں دیا جائے گا۔‘‘

مغربی بنگال کی وزیر اعلیٰ نے اپنی بات کو آگے بڑھاتے ہوئے کہا کہ ’’الیکشن کمیشن نے وزیر اعظم نریندر مودی اور امت شاہ کے دورے کے مطابق تاریخوں کا اعلان کیا ہے۔ جو بی جے پی نے کہا الیکشن کمیشن نے وہی کیا ہے۔ وزیر داخلہ اپنی طاقت کا غلط استعمال کر رہے ہیں۔ ہم ہر حال میں بی جے پی کو شکست دیں گے، کھیل جاری ہے، ہم کھیلیں گے اور جیتیں گے بھی۔‘‘

وزیر اعظم نریندر مودی کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے ممتا بنرجی نے کہا کہ ’’پی ایم اپنی طاقت کا غلط استعمال نہ کریں۔ اس سے بی جے پی کو کوئی فائدہ نہیں ہوگا۔ بی جے پی کو بنگال کی عوام جواب دے گی۔ بی جے پی عوام کو ہندو-مسلم میں تقسیم کر رہی ہے، لیکن انھیں کامیابی نہیں ملے گی۔‘‘

واضح رہے کہ مغربی بنگال میں 27 مارچ (30 اسمبلی حلقہ)، یکم اپریل (30 اسمبلی حلقہ)، 6 اپریل (31 اسمبلی حلقہ)، 10 اپریل (44 اسمبلی حلقہ)، 17 اپریل (45 اسمبلی حلقہ)، 22 اپریل (43 اسمبلی حلقہ)، 26 اپریل (36 اسمبلی حلقہ)، 29 اپریل (35 اسمبلی حلقہ) کو یعنی 8 مراحل میں ووٹنگ کا عمل مکمل ہوگا۔ اس ریاست میں گزشتہ مرتبہ یعنی 2016 اسمبلی انتخابات 7 مراحل میں پورے ہوئے تھے۔ 2016 میں ہوئے اسمبلی انتخابات میں ترنمول کانگریس کو 211، کانگریس کو 44، لیفٹ کو 32، بی جے پی3کو اور دیگر کو 4 سیٹیں حاصل ہوئی تھیں۔ اس مرتبہ بی جے پی 200 سیٹوں کا ہدف لے کر میدان میں اتری ہے اور پارٹی لیڈران ریاست میں ہندو ووٹوں کی متحد کرنے کی ہر ممکن کوشش کر رہے ہیں۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔