مرکزی وزیر خزانہ نرملا سیتارمن نے گاندھی نگر میں گلوبل فنانشل سروسز سنٹر کے لیے 469 کروڑ روپے کی منظوری دی

200 کروڑ روپے ہیڈ کوارٹر کی عمارت کے لیے اور 269.05 کروڑ روپے کی نگرانی کے کاموں کے لیے معاون ٹیکنالوجی اور انفارمیشن ٹیکنالوجی کے بنیادی ڈھانچے کے قیام کے لیے منظوری دی گئی۔

وزیر خزانہ نرملا سیتارمن کی فائل تصویر یو این آئی
وزیر خزانہ نرملا سیتارمن کی فائل تصویر یو این آئی
user

یو این آئی

گاندھی نگر: مرکزی خزانہ اور کارپوریٹ امور کی وزیر نرملا سیتارمن نے ہفتہ کو یہاں گجرات انٹرنیشنل فنانس ٹیک (گفٹ) سٹی میں ہندوستان کے پہلے عالمی مالیاتی خدمات مرکز (آئی ایف ایس سی) کی ترقی اور پیشرفت کے لئے 469 کروڑ روپے کے دو تجویزوں کی منظوری کا اعلان کیا۔ وزارت خزانہ نے بتایا کہ اس میں سے 200 کروڑ روپے اس کے ہیڈ کوارٹر کی عمارت کے لیے اور 269.05 کروڑ روپے کی نگرانی کے کاموں کے لیے معاون ٹیکنالوجی اور انفارمیشن ٹیکنالوجی کے بنیادی ڈھانچے کے قیام کے لیے منظوری دی گئی۔

اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے وزیر خزانہ سیتا رمن نے کہا کہ مرکزی حکومت گفٹ سٹی کو فن ٹیک اینڈ سروسز (مالی ٹیکنالوجی اور خدمات) کے لیے عالمی معیار کا مرکز بنانے کے لیے پرعزم ہے۔ انہوں نے کہا کہ انہوں نے اس عزم کا ذکر سال 2021-22 کے بجٹ میں بھی کیا ہے۔ انہوں نے بتایا کہ بجٹ میں آئی ایف ایس سی سے متعلق اعلانات میں ہوائی جہاز لیز پر دینے والی کمپنیوں کو کیپٹل گین پر ٹیکس چھٹی، غیر ملکی کمپنیوں کو ہوائی جہاز کے لیز کے کرایے کی ادائیگی پر ٹیکس چھوٹ، آئی ایف سی میں غیر ملکی سرمایہ لانے پر ٹیکس مراعات اور اس میں غیر ملکی بینکوں کے سرمایہ کاری ڈویژنوں کو ٹیکس چھوٹ کے التزامات کئے گئے ہیں۔


وزیر خزانہ محترمہ سیتا رمن کی رہنمائی میں وزارت خزانہ اور کارپوریٹ کے سات سیکرٹریوں کی ایک ٹیم آج یہاں ہے۔ ٹیم نے گیفٹ سٹی میں ہندوستان کے پہلے بین الاقوامی مالیاتی خدمات مرکز (آئی ایف ایس سی) کی ترقی اور پیشرفت پر تبادلہ خیال کیا۔ سرکاری اطلاعات کے مطابق ان کے ساتھ وزیر مملکت برائے خزانہ پنکج چودھری اور ڈاکٹر بھگوت کرشنا راؤ کراد بھی تھے۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔