برطانیہ بی بی سی کی فنڈنگ ​​میں کرے گا کٹوتی

ایڈیشنل کلچر سکریٹری لوسی پاول نے کہا ’’وزیراعظم کا خیال ہے کہ ضابطوں کی خلاف ورزی کرنے پر رپورٹنگ کرنے والوں کو سبق ملنا چاہیے، خاص طور پر جب وہ آزاد ہو جائیں‘‘۔

بی بی سی، تصویر آئی اے این ایس
بی بی سی، تصویر آئی اے این ایس
user

یو این آئی

لندن، 17 جنوری (یو این آئی) برطانیہ نے آ ئندہ دو سال کے لئے بی بی سی کی فنڈنگ روکنے کے ساتھ ہی 2027 میں نشریاتی چینل کا لائسنس ختم کئے جانے کا اعلان کیا ہے۔ برطانیہ کی ثقافتی سکریٹری ناڈین ڈوریز نے یہ اطلاع دی۔ ثقافتی سکریٹری ناڈین ڈوریز کی جانب سے اتوار کو یہ اعلان کیے جانے کے بعد ایڈیشنل کلچر سکریٹری لوسی پاول نے کہا ’’وزیراعظم کا خیال ہے کہ ضابطوں کی خلاف ورزی کرنے پر رپورٹنگ کرنے والوں کو سبق ملنا چاہیے، خاص طور پر جب وہ آزاد ہو جائیں‘‘۔

دی انڈیپنڈنٹ کی رپورٹ کے مطابق یہ اعلان ’آپریشن ریڈ میٹ‘ کے درمیان کیا گیا ہے تاکہ بورس جانسن کی پریمیئر شپ کو بچایا جا سکے۔ دریں اثنا کووڈ- 19 پابندیوں کے باوجود برطانیہ کے وزیر اعظم کے ویسٹ منسٹر میں پارٹی کرنے کے الزامات کے سلسلے میں متعدد اراکین پارلیمنٹ ان کے استعفے کا مطالبہ کر رہے ہیں۔


دی گارڈین کی رپورٹ کے مطابق ایسی خبریں آئی ہیں کہ پارلیمنٹ میں وزیر اعظم کے خلاف تحریک عدم اعتماد پیش کرنے کے لیے درکار 54 ووٹوں میں سے 35 ووٹ پہلے سے ہی موجود ہیں، حالانکہ اصل تعداد ہوشیدہ رکھی گئی ہے۔

پچھلے ہفتے وزیر اعظم نے یہ بھی اعتراف کیا تھا کہ 20 مئی 2020 کو انہوں نے جس ’برنگ یو اون بوز‘ پارٹی میں شرکت کی وہ کووڈ-19 کے ضابطوں کے خلاف تھی، جبکہ اس سے قبل انہوں نے لاک ڈاؤن کے دوران کوئی پارٹی نہیں ہونے کا دعویٰ کیا تھا۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔