تقسیم ہند تاریخی غلطی، ملک کے سبھی مسلمانوں کو اٹھانا پڑا نقصان: فاروق عبداللہ

وارانسی میں پی ایم مودی کی عظیم الشان تقریب پر فاروق عبداللہ نے کہا ’’مبارک ہو، یہ اچھی بات ہے۔ حالانکہ وزیر اعظم مودی کو دوسرے مذاہب کو بھی توجہ دینی چاہیے کیونکہ وہ صرف ایک مذہب کے وزیر اعظم نہیں۔‘‘

فاروق عبداللہ، تصویر یو این آئی
فاروق عبداللہ، تصویر یو این آئی
user

قومی آوازبیورو

نیشنل کانفرنس کے قومی سربراہ فاروق عبداللہ نے ہندوستان کی تقسیم کو ایک بہت بڑی تاریخی غلطی بتاتے ہوئے دعویٰ کیا ہے کہ اس کا نقصان صرف کشمیریوں کو ہی نہیں، بلکہ پورے ملک کے مسلمانوں کو بھگتنا پڑا۔ انھوں نے کہا کہ ملک ایک رہتا تو طاقت بھی رہتی اور ملک میں بھائی چارہ بھی رہتا۔

ہندوستان کی تقسیم کو لے کر وزیر دفاع راج ناتھ سنگھ کے ذریعہ دیے گئے بیان کی حمایت کرتے ہوئے نیشنل کانفرنس کے قومی سربراہ فاروق عبداللہ نے کہا کہ ہندوستان کی تقسیم ایک بہت بڑی تاریخی غلطی تھی۔ اس کا نقصان پورے ملک کو بھگتنا پڑا ہے۔


کاشی وشوناتھ مندر کی از سر نو تعمیر اور وارانسی میں منعقد عظیم الشان تقریب کے تعلق سے میڈیا سے بات کرتے ہوئے فاروق عبداللہ نے کہا کہ ’’مبارک ہو، یہ اچھی بات ہے۔ حالانکہ وزیر اعظم مودی کو دوسرے مذاہب کو بھی توجہ دینی چاہیے، کیونکہ وہ صرف ایک مذہب کے نہیں پورے ہندوستان کے وزیر اعظم ہیں۔ ہندوستان میں بہت سارے مذاہب ہیں۔‘‘

راجستھان کے جے پور میں مہنگائی ہٹاؤ ریلی میں ہندو اور ہندوتوا کو لے کر راہل گاندھی کے ذریعہ دیے گئے بیان پر رد عمل ظاہر کرتے ہوئے فاروق عبداللہ نے کہا کہ کوئی مذہب برا نہیں ہوتا ہے، انسان برے ہوتے ہیں۔ انھوں نے کہا کہ وہ امید کریں گے کہ ہندو اصل ہندو بنے اور اپنے مذہب پر عمل کرے۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔