ٹیکہ نہیں، تو کیمپس میں داخلہ نہیں! کورونا کے خطرناک پھیلاؤ کے دوران جامعہ ملیہ اسلامیہ کی ہدایت

یونیورسٹی انتظامیہ نے بتایا کہ جامعہ ملیہ اسلامیہ کی وائس چانسلر پروفیسر نجمہ اختر نے کیمپس میں کورونا اور اومیکرون کے معاملوں میں پھیلاؤ کی روک تھام کے لئے یہ ہدایت جاری کی ہے۔

جامعہ ملیہ اسلامیہ
جامعہ ملیہ اسلامیہ
user

قومی آوازبیورو

نئی دہلی: ملک بھر میں کورونا کے پھیلاؤ کا اثر اب یونیورسٹیوں میں بھی نظر آ رہا ہے۔ ملک کا مایہ ناز تعلیمی ادارہ جامعہ ملیہ اسلامیہ دہلی نے اسی کے پیش نظر ’نو ویکسین، نو کیمپس انٹری‘ (ٹیکہ نہیں، تو کیمپس میں داخلہ نہیں) کی ہدایت جاری کی ہے۔ صرف اتنا ہی نہیں یونیورسٹی انتظامیہ نے واضح کیا ہے کہ جامعہ سے وابستہ جن ملازمین نے تاحال ٹیکہ نہیں لگوایا ہے ان کے خلاف کارروائی عمل میں لائی جائے گی۔

یونیورسٹی انتظامیہ نے بتایا کہ جامعہ ملیہ اسلامیہ کی وائس چانسلر پروفیسر نجمہ اختر نے کیمپس میں کورونا اور اومیکرون کے معاملوں میں پھیلاؤ کی روک تھام کے لئے یہ ہدایت جاری کی ہے۔ دہلی میں واقع جامعہ ملیہ اسلمامیہ میں صرف انہی ملازمین کو ان کے متعلقہ محکموں میں داخلہ دیا جائے گا جنہوں نے کسی بھی منظور شدہ کورونا ویکسین کی کم از کم ایک خوراک لے لی ہے۔


جن ملازمین نے ویکسین کی ایک بھی خوراک نہیں لگوائی ہے انہیں اپنے متعلقہ دفاتر میں آنے کی اجازت نہیں ہوگی۔ یہی نہیں یونیورسٹی انتظامیہ کا کہنا ہے کہ اب ایسے ملازمین کے خلاف قواعد کے مطابق کارروائی بھی عمل میں لائی جائے گی۔ ایسے ملازمین کی ڈیوٹی سے غیر حاضری کو کورونا ویکسین کی پہلی خوراک لگوانے تک رخصت پر سمجھا جائے گا۔

اس سے قبل، وائس چانسلر نے یونیورسٹی کے تمام طلباء اور عملہ سے اپیل کی تھی کہ وہ قومی راجدھانی دہلی میں کورونا اور اومیکرون کے کیسوں کی تعداد میں اضافے کے پیش نظر مناسب پروٹوکول پر سختی سے عمل کریں۔ وائس چانسلر نے یونیورسٹی کے نواب منصور علی خان اسپورٹس کمپلیکس میں جمنازیم، داخلی سرگرمیاں اگلے احکامات تک بند رکھنے کی ہدایت جاری کی ہے۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔