جموں و کشمیر میں الیکشن کے بعد ہی کوئی حکومت بنے گی: بی جے پی

جموں و کشمیر بی جے پی کے صدر رویندر رینہ کا کہنا ہے کہ ”لگاتار سوشل میڈیا پر خبریں آرہی ہیں کہ جموں وکشمیر میں ایک عبوری حکومت بننے والی ہے، یہ ایک شگوفہ ہے اور سوشل میڈیا کا پروپیگنڈا ہے۔“

تصویر سوشل میڈیا
تصویر سوشل میڈیا
user

یو این آئی

جموں: بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) جموں وکشمیر یونٹ کے صدر رویندر رینہ نے یونین ٹریٹری میں سید محمد الطاف بخاری کی سربراہی میں عبوری حکومت بننے کی خبروں کو سوشل میڈیا پروپیگنڈا قرار دیتے ہوئے کہا کہ جموں وکشمیر میں جب بھی کوئی حکومت بنے گی تو وہ الیکشن کے بعد ہی بنے گی۔ انہوں نے کہا کہ یونین ٹریٹری کا اگلا وزیر اعلیٰ بی جے پی کا ہی ہوگا اور وہ بھی ڈوگرہ ہوگا۔

موصوف صدر نے الطاف بخاری کی سربراہی میں جموں وکشمیر ایڈوائزری کونسل بننے کی افواہوں کے حوالے سے یہاں میڈیا کے ساتھ بات کرتے ہوئے کہا کہ 'لگاتار سوشل میڈیا اور الیکٹرانک و پرنٹ میڈیا پر خبریں آرہی ہیں کہ جموں وکشمیر میں ایک عبوری حکومت بننے والی ہے، یہ ایک شگوفہ ہے اور سب سوشل میڈیا کا پروپیگنڈا ہے'۔ انہوں نے کہا کہ یہاں کوئی سرکار بننے والی نہیں ہے اور نہ ہی کوئی وزیر اعلیٰ بننے والا ہے۔

رویندر رینہ نے کہا کہ جموں و کشمیر میں لیفٹیننٹ گورنر کی سربراہی میں کام کاج چل رہا ہے جب بھی کوئی نئی حکومت بنے گی تو الیکشن کے بعد ہی بنے گی۔ انہوں نے کہا کہ 'یہاں کوئی عبوری حکومت نہیں بنے گی جب بھی کوئی حکومت بنے گی تو وہ الیکشن کے بعد ہی بنے گی اور جموں وکشمیر کا اگلا وزیر اعلیٰ بی جے پی کا ہی ہوگا اور بھی ڈوگرہ ہوگا'۔

جموں وکشمیر میں اسمبلی حلقوں کی ازسرنو حد بندی کے حوالے سے پوچھے گئے ایک سوال کے جواب میں موصوف صدر نے کہا کہ 'اسمبلی نشستوں کی جب حد بندی ہوگی تو جن لوگوں کو شکوک وشبہات ہوں گے ان کو دوور کیا جائے گا کیونکہ اس کو آئین اور قانون کے مطابق کیا جائے گا'۔ انہوں نے کہا کہ بی جے پی کی طرف سے جموں وکشمیر کو خصوصی درجہ عطا کرنے والی دفعات 370 اور 35 اے اور دو جھنڈوں میں سے ایک جھنڈے کو ختم کرنے پر سب لوگ خوش ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ ہم نے اپنے وعدوں کو پورا کیا اور ٹول پلازہ ختم کرنے کے وعدے کو بھی پورا کریں گے۔