کیجریوال 300 یونٹ مفت بجلی کا وعدہ کر پنجابی عوام کو گمراہ کر رہے ہیں: کانگریس

دہلی پریس کانگریس کمیٹی کے صدر چودھری انل کمار کا کہنا ہے کہ وزیر اعلیٰ اروند کیجریوال نے جب دہلی کے باشندوں سے کیا گیا ایک بھی وعدہ پورا نہیں کیا، پھر پنجاب کے عوام ان پر کیسے بھروسہ کر سکتے ہیں۔

چودھری انل کمار (کانگریس)
چودھری انل کمار (کانگریس)
user

تنویر

پنجاب اسمبلی الیکشن کو لے کر عام آدمی پارٹی کی سرگرمیاں تیز ہو گئی ہیں اور دہلی کے وزیر اعلیٰ اروند کیجریوال نے یہ اعلان بھی کر دیا ہے کہ اگر عآپ حکومت تشکیل پاتی ہے سبھی کو 300 یونٹ مفت بجلی فراہم کی جائے گی۔ کیجریوال کے اس وعدہ کو دہلی کانگریس نے پوری طرح سے گمراہی پر مبنی قرار دیا ہے۔ دہلی پردیس کانگریس کمیٹی کے صدر چودھری انل کمار کا کہنا ہے کہ ’’وزیر اعلیٰ اروند کیجریوال نے آکسیجن فراڈ کر کے دہلی ہی نہیں کئی ریاستوں کے کووڈ مریضوں کو پریشانی میں مبتلا کر دیا، ایسے شخص پر پنجاب کے لوگ کیسے بھروسہ کر سکتے ہیں۔‘‘ انھوں نے مزید کہا کہ ’عآپ سربراہ کیجریوال دہلی میں موجود بجلی مسائل کو چھوڑ کر پنجاب میں بجلی بل معاف کرنے کی بات کر رہے ہیں جو عوام کو گمراہ کرنے کی کوشش کے علاوہ کچھ نہیں۔‘‘

چودھری انل کمار نے دہلی اور پنجاب میں بجلی بل کا موازنہ پیش کرتے ہوئے کہا کہ ’’دہلی میں بجلی سستی کرنے کی مثال دے کر پنجاب میں 300 یونٹ تک بل معاف کرنے کی بات کیجریوال کر رہے ہیں، جب کہ دہلی میں فی یونٹ بجلی شرح 6.79 روپے ہے اور پنجاب میں فی یونٹ بجلی6.51 روپے ہے۔ پھر دہلی میں سستی بجلی دینے کا دعویٰ کس طرح کیا جا رہا ہے۔‘‘ انھوں نے مزید کہا کہ ’’کیجریوال کو جھوٹ بولنے میں مہارت ہے اور وہ جھوٹ کے سہارے پنجاب میں اپنی سیاسی زمین تلاش کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔‘‘


اپنے بیان کو آگے بڑھاتے ہوئے چودھری انل کمار گزشتہ دہلی الیکشن کا تذکرہ کرتے ہوئے کہا کہ اروند کیجریوال نے الیکشن سے قبل انتخابی منشور میں عوام کو گمراہ کرنے کے لیے بجلی کمپنیوں کے خلاف آڈٹ کرانے کی بات کہی تھی، بجلی کمپنیوں میں آپس میں مقابلہ بڑھا کر بجلی کی قیمت کم کرنے کا وعدہ کیا تھا، عوام کو اپنے مطابق بجلی کمپنی کا انتخاب کرنے کا متبادل پیش کیے جانے کا بھی وعدہ کیا تھا لیکن کوئی بھی وعدہ پورا نہیں کیا گیا۔ دہلی کانگریس صدر نے کہا کہ ’’موقع پرست کیجریوال کے ذریعہ عوام کو راحت دینے کے لیے کیے گئے وعدے جملے بن کر رہ گئے اور بجلی صارفین کو دی جانے والی سبسیڈی کی رقم بجلی کمپنیوں کو دی جا رہی ہے۔‘‘

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔