مزدوروں کے حقوق روندنا کسی بھی طرح مناسب نہیں: راہل گاندھی

راہل گاندھی نے اپنے ایک ٹوئٹ میں لکھا ہے کہ اس وقت ملک کورونا سے لڑ رہا ہے اور ایسے وقت میں بہانہ بنا کر کسی کو بھی مزدوروں کے بنیادی حقوق روندنے کی اجازت نہیں دی جا سکتی ہے۔

تصویر سوشل میڈیا
تصویر سوشل میڈیا
user

قومی آوازبیورو

کانگریس لیڈر اور سابق پارٹی صدر راہل گاندھی نے لاک ڈاؤن کے درمیان کچھ ریاستوں کی طرف سے لیبر قوانین میں ترمیم کیے جانے کے فیصلے کی سخت الفاظ میں مخالفت کرتے ہوئے کہا ہے کہ اس وقت ملک کورونا سے لڑ رہا ہے اور کسی کو بھی مزدوروں کے بنیادی حقوق روندنے کی اجازت نہیں دی جا سکتی ہے۔

راہل گاندھی نے آج اس سلسلے میں ایک ٹوئٹ کیا جس میں انھوں نے لکھا ہے کہ ”کئی ریاستوں کے ذریعہ لیبر ایکٹ میں ترمیم کی جا رہی ہے۔ ہم کورونا کے خلاف مل کر جدوجہد کر رہے ہیں، لیکن یہ حقوق انسانی کو روندنے، غیر محفوظ کام کے مقام کی اجازت، مزدوروں کے استحصال اور ان کی آواز دبانے کا بہانہ نہیں ہو سکتا۔ ان بنیادی اصولوں پر کوئی سمجھوتہ نہیں ہو سکتا۔“

واضح رہے کہ کورونا کی وجہ سے فیکٹریوں اور دفاتر میں کام پوری طرح سے بند رہنے کا حوالہ دیتے ہوئے کچھ لوگوں نے لیبر قوانین میں کچھ مہینوں کے لیے ترمیم کرنے کی بات کہی ہے۔ ایسی باتیں سامنے آئی ہیں کہ کچھ ریاستوں میں لیبر قانون کے مطابق 8 گھنٹہ روزانہ کی جگہ 12 گھنٹہ روزانہ کی چھوٹ دی جائے تاکہ فیکٹریوں اور دفاتر میں ٹھپ پڑے کام کا ازالہ ہو سکے۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔