این ڈی اے حکومت میں ملک کی داخلی سلامتی غیرملکی کمپنیوں کے پاس گروی: کانگریس

بہار کانگریس کے صدر ڈاکٹر مدن موہن جھا نے پیگاسس پروجیکٹ معاملہ پر مرکزی حکومت کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہاکہ فون ٹیپنگ معاملے میں 22جولائی کو بہار کانگریس کے اہم لیڈر راج بھون مارچ کریں گے۔

کانگریس، تصویر یو این آئی
کانگریس، تصویر یو این آئی
user

یو این آئی

پٹنہ: بہار کانگریس نے اسرائیلی جاسوسی سافٹ ویئر پیگاسس کی مدد سے ہندستانی سیاستدانوں، جج حضرات، صحافیوں اور دیگر لوگوں کی مبینہ فون ٹیپنگ معاملہ میں مرکز کی قومی جمہوری اتحاد (این ڈی اے) حکومت پر حملہ تیز کرتے ہوئے کہاکہ یہ ملک کی داخلی سلامتی کو غیرملکی کمپنی کے پاس گروی رکھنے والا غلط کام ہے۔

بہار کانگریس کے صدر ڈاکٹر مدن موہن جھا نے بدھ کو یہاں پریس کانفرنس میں کہاکہ پیگاسس سافٹ ویئر کی مدد سے مرکزی حکومت نے اپوزیشن کے لیڈروں، جن میں کانگریس کے سابق صدر راہل گاندھی کے دفتر تک کا فون ٹیپ کروایا ہے۔انہوں نے کہاکہ یہ ملک کی داخلی سلامتی کو غیرملکی کمپنی کے ہاتھوں گروی رکھنے والا عمل ہے۔


ڈاکٹر جھا نے کہاکہ فون ٹیپنگ معاملے میں 22جولائی کو بہار کانگریس کے اہم لیڈر راج بھون مارچ کریں گے۔ انہوں نے اسے اپوزیشن کے لیڈر راہل گاندھی سمیت دیگر اہم لیڈروں، صحافیوں اور جج حضرارت کی فون ٹیپنگ کو پرائیویسی کی خلاف ورزی کا معاملہ قرار دیااور کہاکہ جمہوری ملک میں تانا شاہی رویہ کے ساتھ وزیراعظم نریندر مودی اور وزیر داخلہ امت شاہ کی طرف سے ایسا سلوک کیا جانا نہایت غلط ہے۔

ریاستی صدر نے کہاکہ اس کمپنی کا سافٹ ویئر صرف ملک کی سرکار اور ان کی ایجنسیوں کو ہی فروخت کا اختیار دیا گیا ہے۔ ایم ٹی این ایل جیسی مواصلات اور انٹرنیٹ سروس فراہم کرنے والی کمپنی تک کی جاسوسی کی گئی ہے۔ انہوں نے کہاکہ بہار کے وزیراعلی نتیش کمار بھی مشتبہ ہیں اور ان کی بھی جاسوسی کی جارہی ہے۔ انہوں نے یقینا اس با ت کا خوف ہے ان کے ساتھی ہی ان کی جاسوسی کروا رہے ہیں۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔