’دیش نہیں بکنے دیں گے‘ نعرہ دینے والی بی جے پی فائدے والی سرکاری کمپنیوں کو گھاٹے میں فروخت کر رہی: کانگریس

کانگریس ترجمان گورو ولبھ کا کہنا ہے کہ نندل فائنانس کو پردیپ کمار گپتا اور پرشانت کمار گپتا مل کر چلا رہے ہیں، یہ کمپنی 99 فیصد فرنیچر بنانے کا کام کرتی ہے، اسے حکومت نے اتنی اہم ذمہ داری کیسے سونپ دی

گورو ولبھ، تصویر آئی اے این ایس
گورو ولبھ، تصویر آئی اے این ایس
user

قومی آوازبیورو

کانگریس نے مرکز کی مودی حکومت پر الزام عائد کیا ہے کہ ’دیش نہیں بکنے دیں گے‘ کا نعرہ دینے والی مودی حکومت فائدے میں چل رہی ملک کی عوامی سیکٹر کی کمپنیوں (پی ایس یو) کو گھاٹے میں فروخت کر رہی ہے۔ کانگریس ترجمان گورو ولبھ نے بدھ کو مرکز کی مودی حکومت پر الزام عائد کیا کہ جس کمپنی کے پاس 1562 آرڈر بک ہیں، اس کمپنی کو فروخت کرنے کی کیا ضرورت ہے۔ حکومت کس پرائیویٹ کمپنی کو فائدہ پہنچانے کے لیے ایسا قدم اٹھا رہی ہے۔

غور طلب ہے کہ حکومت نے نومبر میں سنٹرل الیکٹرانکس لمیٹڈ (سی ای ایل) کو نندل فائنانس اینڈ لیجنگ کو 210 کروڑ روپے میں فروخت کرنے کی منظوری دے دی تھی۔ رواں مالی سال میں یہ دوسری اسٹریٹجک ڈِس انوسٹمنٹ رہی۔ حال ہی میں حکومت نے ائیر انڈیا کو چلانے کا ذمہ ٹاٹا کو دیا ہے۔


سنٹرل الیکٹرانکس لمیٹڈ سائنس اینڈ ٹیکنالوجی منسٹری کے تحت آنے والی سی ای ایل کی تشکیل 1974 میں ہوئی تھی۔ کمپنی سولر فوٹووولٹک کے شعبہ میں مشہور ہے اور اس نے اپنی خود کی ریسرچ اینڈ ڈیولپمنٹ کوششوں کے ساتھ ٹیکنالوجی تیار کی ہے۔ کمپنی نے ’ایکسل کاؤنٹر سسٹم‘ بھی تیار کیا ہے جس کا استعمال ٹرینوں کے محفوظ انتظام و انصرام کے لیے ریلوے سگنل سسٹم میں کیا جا رہا ہے۔

اسی سلسلے میں کانگریس ترجمان گورو ولبھ نے بدھ کو الزام عائد کیا کہ کمپنی جو گزشتہ کئی سالوں سے کام کر رہی ہے۔ س کو مرکزی حکومت نے ختم کر دیا۔ کانگریس ترجمان نے کہا کہ نندل فائنانس کو پردیپ کمار اور پرشانت کمار گپتا مل کر چلا رہے ہیں۔ اس کی ایک یونیورسٹی (شاردا یونیورسٹی) بھی ہے۔ انھوں نے کہا کہ یہ کمپنی 99 فیصد فرنیچر بنانے کام کرتی ہے۔ اسے حکومت نے اتنی اہم ذمہ داری کیسے سونپ دی۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔