مچھلی- ہر عمر کے لوگوں کے لئے غذائیت کا خزانہ

بڑی مچھلیوں کے ساتھ چھوٹی مچھلیوں کا کھانا بھی اہم ثابت ہے کیونکہ ان میں معدنیات اور وٹامن کی بڑی مقدار ہوتی ہے۔ مورلا مچھلی ان میں سے ایک ہے۔ ملک میں سالانہ 130.4 کروڑ ٹن مچھلی پیدا ہوتی ہے۔

مچھلی، تصویر آئی اے این ایس
مچھلی، تصویر آئی اے این ایس
user

یو این آئی

نئی دہلی: مچھلی نہ صرف ہر عمر کے لوگوں کو متوازن غذا فراہم کرتی ہے بلکہ تیز دماغ، تیز نظر اور دل کی بیماری جیسی مہلک بیماریوں کو روکنے میں بھی اہم ثابت ہوتی ہے۔ اومیگا 3 اور معیاری پروٹین بہت سی اقسام کی مچھلیوں میں پائے جاتے ہیں جو غیر مرئی طور پر خطرناک بیماریوں جیسے تیز دماغ، بینائی کی خرابی اور دل کی بیماریوں کی روک تھام میں مدد کرتے ہیں۔

انلیڈ فیشریز کے اسسٹنٹ ڈائریکٹر جنرل بی پی موہنتی ملک میں پائی جانے والی مچھلی میں قدرتی طور پر پائے جانے والے غذائی اجزاء پر تحقیق کا حصہ تھے، نے بتایا کہ بیرون ممالک میں کھانے کے بہت سے اختیارات ہونے کے باوجود لوگ مچھلی کھانے کو ترجیح دیتے ہیں۔ یہ صحت کی آگاہی اور بہت سی دوسری وجوہات کی وجہ سے ہوتا ہے۔


ڈاکٹر موہنتی نے بتایا کہ معیاری پروٹین مچھلیوں میں 13۔ 14 سے 22 فیصد تک دستیاب ہے۔ اس میں 25۔30 اقسام کے مائیکرو عناصر پائے جاتے ہیں جو کہ آسانی سے ہضم ہو جاتے ہیں اور جس کی وجہ سے ہمیں توانائی اور قوت مدافعت ملتی ہے جبکہ دوسرے ذرائع سے پائے جانے والے پروٹین آسانی سے ہضم نہیں ہوتے۔

ملک میں ماہی گیری کی تحقیق سے وابستہ سات سرکردہ اداروں نے 2008 سے 2018 تک ملک میں پائی جانے والی مچھلی کی 115 اقسام میں پائے جانے والے غذائی اجزاء پر ایک مطالعہ کیا جس میں یہ پایا گیا کہ سب سے زیادہ اومیگا 3 ایلیس یا ہلسا مچھلی میں پایا جاتا ہے۔ اس میں 10.5 فیصد تیل اور 20 سے 22 فیصد پروٹین ہوتا ہے۔ اوسط مچھلی میں چار سے پانچ فیصد تیل اور 13۔14 فیصد پروٹین ہوتا ہے۔ مچھلی کی ایک قسم ٹینگرا میں 0.5 فیصد تیل ہوتا ہے۔


ڈاکٹر موہنتی کے مطابق مچھلی کے تیل کی ہر عمر کے لوگوں کو ضرورت ہوتی ہے۔ جیسے جیسے لوگ بوڑھے ہوتے جاتے ہیں بھول جانے کا مسئلہ ہوتا ہے لیکن اومیگا 3 کی وجہ سے یادداشت کو برقرار رکھنے میں مدد ملتی ہے اسے 'برین فرینڈلی ڈی ایچ اے' کہا جاتا ہے۔ اسی طرح اسے 'ہارٹ فرینڈلی یا ای پی اے' بھی کہا جاتا ہے۔ اومیگا 3 میں پائے جانے والے عناصر خون کو پتلا رکھتے ہیں۔ اے ڈی ایچ ڈی عنصر بچوں کے لیے بہت فائدہ مند ہے۔

ہلسا مچھلی کا بین الاقوامی تعلق ہے جو اسے انتہائی اہم بنا دیتا ہے۔ بنیادی طور پر یہ مچھلی سمندر میں پائی جاتی ہے لیکن یہ انڈے دینے کے لیے میٹھے پانی کی ندیوں میں آتی ہے اور افزائش کا موسم مکمل ہونے کے بعد اپنے بچوں کے ساتھ سمندر میں واپس چلی جاتی ہے۔ اس بار باریک کانٹوں والی انتہائی لذیذ قسم کی اس مچھلی کی قیمت تقریباً دو ہزار روپے فی کلو تک پہنچ گئی ہے جس کی وجہ سے یہ عام لوگوں کی پہنچ سے باہر ہے۔


بڑی مچھلیوں کے ساتھ چھوٹی مچھلیوں کا کھانا بھی اہم ثابت ہے کیونکہ ان میں معدنیات اور وٹامن کی بڑی مقدار ہوتی ہے۔ مورلا مچھلی ان میں سے ایک ہے۔ ملک میں سالانہ 130.4 کروڑ ٹن مچھلی پیدا ہوتی ہے۔ اندرونی مچھلی کی پیداوار سمندری پیداوار سے تین گنا زیادہ ہے۔ گہرے سمندر میں ماہی گیری کی تکنیک نہ ہونے کی وجہ سے پیداوار کم ہے۔ مچھلی کی پیداوار کے میدان میں انقلابی تبدیلی لانے کے لیے حکومت نے 2050 کروڑ روپے پردھان منتری متسیہ سمپدا یوجنا لے کر آئی ہے جس کے تحت 2024.25 تک مچھلی کی پیداوار دو کروڑ 20 لاکھ ٹن کرنا ہے۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔