ای آئی اے ڈرافٹ: ’مودی حکومت نے اصلاحات کے نام پر صرف امیر کاروباریوں کا فائدہ کیا‘

سونیا گاندھی نے لکھا کہ حکومت نے اصلاحات کے نام پر صرف اور صرف امیر کاروباریوں کا فائدہ کیا ہے لیکن اب وقت آ گیا ہے کہ عوامی صحت میں سرمایہ کاری کرنی ہوگی۔

کانگریس صدر سونیا گاندھی
کانگریس صدر سونیا گاندھی
user

قومی آوازبیورو

مرکز کی مودی حکومت کی طرف سے لایا گیا ماحولیاتی اثرات کا جائزہ (ای آئی اے) سے متعلق ڈرافٹ پر ہر طرف سے تنقید کی جا رہی ہے۔ اپوزیشن جماعتوں سے لے کر ماحولیات کے حق میں آواز اٹھانے والے سماجی کارکنان بھی اس کی مخالفت کر رہے ہیں۔ اب کانگریس کی صدر سونیا گاندھی نے اس مسئلہ پر ایک مضمون لکھا ہے، جس میں انہوں نے مودی حکومت کی اس پالیسی پر سخت تنقید کی ہے۔

ایک انگریزی اخبار میں سونیا گاندھی نے لکھا ’’اگر آپ قدرت کی حفاظت کریں گے، تو وہ آپ کی حفاظت کرے گی۔ حال ہی میں دنیا میں کورونا وائرس کا جو بحران پیدا ہوا ہے وہ انسانوں کو ایک سبق دیتا ہے۔ ایسے حالات میں ہمارا فرض ہے کہ ہم ماحولیات کی حفاظت کریں۔

سونیا گاندھی نے لکھا، ’’ہمارے ملک نے ترقی کی رفتار کے لئے ماحولیات کی قربانی دی ہے لیکن اس کی بھی ایک حد طے ہونی چاہیے۔ گزشتہ 6 سال سے حکومت کا ریکارڈ ایسا ہی رہا ہے جس میں ماحولیات کی حفاظت پر کوئی توجہ نہیں دی گئی۔ آج دنیا میں اس معاملہ میں ہم کافی پیچھے ہیں۔ وبا کے سبب حکومت کو غور و خوض کرنا چاہیے تھا، لیکن اسے نظرانداز کیا جا رہا ہے۔

کانگریس کی صدر نے حکومت پر نشانہ لگاتے ہوئے کہا کہ پہلے کوئلہ کھدانوں کی بات ہو یا پھر اب ای آئی اے کا نوٹیفکیشن، کسی سے بھی رائے نہیں لی جا رہی ہے۔ گجرات کے وزیر اعلیٰ کے عہدے سے اب تک نریندر مودی کا ٹریک ریکارڈ ماحولیات کے حوالہ سے خراب رہا ہے، اب بھی حکومت ایز آف ڈوئنگ بزنس کے نام پر اصولوں کو برباد کر رہی ہے۔

ماحولیات کے علاوہ سونیا گاندھی نے قبائلیوں کے مسئلہ پر بھی حکومت کو گھیرا، کانگریس صدر نے لکھا کہ یو پی اے نے جو قانون منظور کیا تھا اسے حکومت نے تبدیل کر دیا۔ اندرا گاندھی طویل مدت تک جنگلوں کے تحفظ کے لئے آواز اٹھاتی رہیں، کانگریس بھی اسی راہ پر آگے بڑھی ہے۔ سونیا گاندھی نے لکھا کہ حکومت نے اصلاحات کے نام پر صرف اور صرف امیر کاروباریوں کا فائدہ کیا ہے لیکن اب وقت آ گیا ہے کہ عوامی صحت میں سرمایہ کاری کرنی ہوگی۔

کانگریس صدر نے مطالبہ کیا کہ چھوٹے کاروباریوں کو سبسڈی دینی چاہیے، نئی ماحولیاتی پالیسی لانے کی مخالفت کوئی نہیں کر رہا، لیکن اسے سائنسی طریقہ سے لوگوں اور ماہرین سے بات کر کے لانا چاہیے تھا۔ سونیا گاندھی سے قبل کانگریس لیڈر راہل گاندھی بھی اس مسئلہ پر مرکزی حکومت پر نشانہ لگا چکے ہیں، انہوں نے نئے ڈرافٹ کو حکومت کی کھلی لوٹ قرار دیا تھا۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔


next