کورونا کی مبینہ دوا بنا کر پھنسے رام دیو، مقدمہ درج کرائے گی راجستھان حکومت

راجستھان حکومت میں وزیر صحت رگھو شرما نے کہا کہ وبا کے دور میں بابا رام دیو نے جس طرح سے کورونا کی مبینہ دوا بیچنے کی کوشش کی ہے، جوکہ اچھی بات نہیں ہے۔

تصویر سوشل میڈیا
تصویر سوشل میڈیا
user

قومی آوازبیورو

جے پور: رام دیو کے کووڈ-19 کا صد فیصد علاج کرنے کے دعوے کے ساتھ دوا لانچ کرنے کے ایک دن بعد راجستھان حکومت نے کہا ہے کہ یہ دھوکہ دہی ہے اور اس معاملہ میں کارروائی کی جائے گی۔راجستھان حکومت میں وزیر صحت رگھو شرما نے کہا کہ وبا کے دور میں بابا رام دیو نے جس طرح سے کورونا کی مبینہ دوا بیچنے کی کوشش کی ہے، جوکہ اچھی بات نہیں ہے۔

وزیر صحت رگھو شرما نے کہا کہ وزارت آیوش کے گزٹ نوٹیفکیشن کے مطابق رام دیو کو آئی سی ایم آر اور راجستھان حکومت سے کسی بھی کورونا کی آیورویدک دوائی کے تجربہ کے لئے منظوری لینی چاہیے تھی مگر بغیر کسی اجازت اور بغیر کسی معیار کے ٹرائل کرنے کا دعوی کیا گیا، جو سراسر غلط ہے۔


رگھو شرما نے کہا کہ ہم قانونی کارروائی کریں گے اور ہمارے ایک ڈاکٹر نے مقدمہ درج کرایا ہے، اس مقدمہ کے تحت بھی کارروائی کی جائے گی۔ ادھر نیمس یونیورسٹی میں گونا کینٹ کو لے کر جانے والے جے پور کے چیف میڈیکل آفیسر کا کہنا ہے کہ وہ وہاں پر انچارج تھے اور وہاں پر کسی طرح کی کوئی اجازت ٹرائل کے لئے نہییں لی گئی۔

سی ایم او نے کہا کہ ہم نے کسی ٹرائل کو ہوتے ہوئے نہیں دیکھا۔ وہاں پر جتنے بھی مریض داخل کیے گئے تھے سارے کے سارے بغیر علامات والے مریض تھے۔ کسی میں بخار، کھانسی یا گلے کی خراش نہیں تھی۔ ایسے تمام مریض 7 سے 10 دن میں صحت یاب ہوئے ہیں اور دوسری جگہ پر ایسے بغیر علامات والے مرٰیضوں کو رکھا گیا ہے، وہاں بھی مریض اتنے ہی دنوں میں صحتیاب ہوئے ہیں۔


واضح رہے کہ گزشتہ روز کورونیل نامی دوا لانچ کر کے کورونا کا 100 فیصد علاج کا دعوی کرنے کے چند گھنٹوں بعد ہی اس دوا کی تشہیر پر روک لگا دی۔ اس سے پہلے پتنجلی ریسرچ فاؤنڈیشن ٹرسٹ کی طرف سے آیوش کی وزارت کو بتایا گیا تھا کہ دوا کے حوالہ سے کللینکل ٹرائل جے پور کے نیشنل انسٹی ٹیوٹ آف میڈیکل اینڈ سائنس(نمز) میں کیا گیا تھا۔

نمز میں ٹرائل کی بات منظر عام پر آنے کے بعد راجستھان حکومت حرکت میں آ گئی اور کہا کہ پتنجلی نے کوئی منظوری نہیں لی ہے۔ حکومت کا دعوی ہے کہ نمز میں کسی بھی مریض کی رپورٹ تین دن میں نہیں آ سکتی اور جن مریضوں پر ٹرائل کیا گیا وہ اسی دن نگیٹو ہو جاتے ہیں۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔