رام دیو کو وزارت آیوش نے دیا جھٹکا، ’کورونا کی دوا‘ کے اشتہار پر روک

وزارت کا کہنا ہے کہ اس دوا کے حوالہ سے حقائق اور سائنسی تجربات کے بارے میں مطلع نہیں کیا گیا ہے۔ وزارت کا یہبھی کہنا ہے کہ پتنجلی کے اشتہارات پر با ضابطہ جانچ ہونے تک روک رہے گی۔

تصویر یو این آئی
تصویر یو این آئی
user

قومی آوازبیورو

یوگا کے گرو بابا رام دیو کی کمپنی پتنجلی نے منگل کے روز کورونا وائرس کی بیماری کا سو فیصد علاج کرنے کا دعوی کرتے ہوئے کورونیل نامی دوا لانچ کی لیکن حکومت نے انہیں فوری طور پر جھٹکا دے دیا، وزارت آیوش نے پتنجلی کی اس دوا کے اشتہار پر روک لگا دی ہے۔ وزارت آیوش نے پتنجلی کی دوا کا نوٹس لیتے ہوئے پوری معلومات طلب کی ہے۔ وزارت کا کہنا ہے کہ اس دوا کے حوالہ سے اسے حقائق اور سائنسی تجربات پر مطلع نہیں کیا گیا ہے۔ وزارت آیوش نے کہا ہے کہ پتنجلی کے اشتہارات پر جب تک روک رہے گی جب تک اس معاملہ کی باضابطہ طور پر جانچ نہیں ہو جاتی۔ وزارت نے اتراکھنڈ کے متعلقہ ریاستی لائسنسی ٹریبیونل سے بھی معلومات طلب کی ہے۔

قبل ازیں، ہری دوار میں منعقدہ ایک پریس کانفرنس میں کورونیل کے ساتھ دو دیگر دوائیں بھی لانچ کی گئیں۔ ان تینوں دوائوں کی ایک کٹ تیار کی گئی ہے، جسے کورونا کٹ کا نام دیا گیا ہے۔ کورونا کٹ میں موجود کورونیل کی مارکیٹ قیمت 400 روپے، شواساری وٹی کی قیمت 120 روپے اور انوتیل کی قیمت 25 روپے ہے۔ کورونا کٹ مریضوں کے لئے ایک ماہ کی خوراک پر مشتمل ہے۔ شواساری وٹی نظام تنفس کو مضبوط بنانے کی دوا ہے۔ انو تیل کو صبح کے وقت ناک میں تین سے پانچ قطرے ڈالنا پڑتا ہے۔ کورونیل میں موجود تلسی، گیلو اور اشوگندھا مدافعتی قوت کو بڑھا تے ہيں۔ کھانے کے بعد دن میں تین بار کورونیل کی خوراک لینی ہے۔

انہوں نے بتایا کہ کورونیل میں اشوگندھا، گیلو، تلسی، دار چینی، لونگ، ملیٹھی اور ککڑا سنگھی وغیرہ جڑی بوٹیاں شامل ہیں۔ اس میں کچھ معدنیات بھی ہیں، جو صفوف کی شکل میں اس میں شامل کردی گئی ہیں۔ راجستھان کے پتنجلی ریسرچ انسٹی ٹیوٹ اور نیشنل انسٹی ٹیوٹ آف میڈیکل سائنس، جے پور نے کورونیل بنانے کے لئے مشترکہ طور پر تحقیق کی ہے۔ یہ دوائيں دیویہ فارمیسی اور پتنجلی آیوروید مل کر تیار کریں گی۔