فائزر کا 100 دنوں کے اندر ’اومیکرون‘ ویرینٹ کا ویکسین تیار کرنے کا دعویٰ

عالمی ادارہ صحت کے بیان کے مطابق فائزر اور بایو این ٹیک نے کہا کہ وہ اگلے دو ہفتوں میں اومیکرون پر مزید ڈیٹا کی توقع رکھتے ہیں، کیونکہ یہ پہلے سے پائے جانے والے مختلف ویرینٹس سے کافی الگ ہے۔

فائزر ویکسین، تصویر آئی اے این ایس
فائزر ویکسین، تصویر آئی اے این ایس
user

یو این آئی

واشنگٹن: دوا ساز کمپنی فائزر اور بایو این ٹیک نے کہا ہے کہ وہ 100 دنوں کے اندر کورونا وائرس (کووڈ-19) کے نئے ویرینٹ اومیکرون کے خلاف ایک نئی ویکسین تیار کرلیں گے۔ دونوں کمپنیوں نے جمعہ کو یہاں جاری ایک بیان میں کہا کہ انہیں اس بات کا یقین نہیں ہے کہ آیا ان کی ویکسین کورونا وائرس کے ویرینٹ اومیکرون سے بچانے کی صلاحیت رکھتی ہے یا نہیں، لیکن وہ تقریباً 100 دنوں میں اس ویرینٹ کے خلاف ایک نئی ویکسین تیار کر لیں گی۔

اس سے ایک دن قبل عالمی ادارہ صحت ( ڈبلیو ایچ او) نے اپنے ایک بیان میں کہا تھا کہ جنوبی افریقہ میں شناخت شدہ کورونا وائرس کی نئی قسم ’B.1.1529 ‘ تشویشناک ہے اور اس کا نام یونانی حروف تہجی میں ’اومیکرون‘ سے رکھا گیا ہے۔


عالمی ادارہ صحت کے بیان کے مطابق فائزر اور بایو این ٹیک نے کہا کہ وہ اگلے دو ہفتوں میں اومیکرون پر مزید ڈیٹا کی توقع رکھتے ہیں اور ایسا دیکھا گیا ہے کہ یہ پہلے سے پائے جانے والے مختلف ویرینٹس سے کافی الگ ہے۔ بیان میں کہا گیا ہے کہ دوا ساز کمپنیوں نے اس بات کی نشاندہی کی ہے کہ انہوں نے نئی ویکسین تیار کرنے کے لئے کئی مہینے پہلے ہی کام شروع کر دیا تھا۔ انہوں نے کہا کہ ان کی و یکسین فی الحال چھ ہفتوں کے اندر خود کو ایڈجسٹ کرنے کے قابل ہے اور وہ 100 دنوں کے اندر ابتدائی بیچ تیار کرنے کے قابل ہے۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔