بچپن میں فضائی آلودگی کا سامنا جوانی میں پھیپھڑوں کی صحت کے لیے نقصان دہ: تحقیق

ایک تحقیق سے ثابت ہوا ہے کہ بچپن میں فضائی آلودگی کا سامنا مستقبل میں پھیپھڑوں کی صحت کو متاثر کر سکتا ہے۔ اس کے علاوہ محققین نے آلودگی کو کم کرنے کی ضرورت پر بھی زور دیا ہے

<div class="paragraphs"><p>فضائی آلودگی / آئی&nbsp;اے&nbsp;این ایس</p></div>

فضائی آلودگی / آئیاےاین ایس

user

قومی آوازبیورو

نئی دہلی: ایک تحقیق سے ثابت ہوا ہے کہ بچپن میں فضائی آلودگی کا سامنا مستقبل میں پھیپھڑوں کی صحت کو متاثر کر سکتا ہے۔ اس کے علاوہ محققین نے آلودگی کو کم کرنے کی ضرورت پر بھی زور دیا ہے۔ یونیورسٹی آف سدرن کیلیفورنیا (یو ایس سی) کے سائنسدانوں نے پایا ہے کہ بچپن میں فضائی آلودگی کا سامنا کرنے والے لوگ جوان میں برونکائٹس کی علامات جیسے دائمی کھانسی، بند ناک یا بلغم کی پریشانی میں مبتلا ہیں اور ان بیماریوں کا سردی لگنے سے کوئی تعلق نہیں تھا۔

امریکن جرنل آف ریسپریٹری اینڈ کلینکل کیئر میڈیسن میں شائع ہونے والی اس تحقیق میں 1308 بچوں کی صحت کا جائزہ لیا گیا۔ ان کی بالغ ہونے پر تشخیص کے وقت اوسط عمر 32 سال تھی۔ تحقیق کے نتائج سے یہ بات سامنے آئی کہ شرکاء میں سے ایک چوتھائی گزشتہ 12 مہینوں میں برونکائٹس کی علامات سے پریشان رہے۔


کیک اسکول آف میڈیسن میں آبادی اور صحت عامہ کے سائنسز کے اسسٹنٹ پروفیسر، ایم ڈی ایریکا گارسیا نے کہا، ’’نتائج سے پتہ چلتا ہے کہ بچپن میں فضائی آلودگی سے ہمارے نظام تنفس پر زیادہ لطیف اثرات مرتب ہوتے ہیں، جو جوانی میں بھی ہمیں متاثر کر سکتے ہیں۔‘‘

برونکائٹس کی علامات کی موجودگی پیدائش اور 17 سال کی عمر کے درمیان دو قسم کے آلودگیوں کے سامنے آنے سے وابستہ تھی۔ ایک گروپ میں ہوا میں موجود باریک ذرات جیسے دھول، پولن، جنگل کی آگ سے نکلنے والی راکھ، صنعتی اخراج اور گاڑیوں کے دھوئیں کے ذرات شامل ہیں۔جبکہ دوسرا نائٹروجن ڈائی آکسائیڈ ہے، جو آٹوموبائلز، ہوائی جہازوں، کشتیوں اور پاور پلانٹس میں دہن کی ایک ضمنی پیداوار ہے، جو پھیپھڑوں کے کام کو نقصان پہنچانے کے لیے جانا جاتا ہے۔


اس تحقیق میں جن بچوں پر توجہ مرکوز کی گئی جو فضائی آلودگی کے اثرات کے حوالے سے خاص طور پر حساس ہوتے ہیں۔ ان کی سانس اور مدافعتی نظام اب بھی ترقی کر رہے ہیں اور وہ بالغوں کے مقابلے میں اپنے جسمانی وزن کے مقابلے میں زیادہ سانس لیتے ہیں۔

ٹیم نے یہ بھی پایا کہ بچپن میں نائٹروجن ڈائی آکسائیڈ اور ذرات کی نمائش سے بچوں پر منفی اثرات مرتب ہوتے ہیں۔ وہیں، تحقیق کے مطابق، بالغوں میں برونکائٹس کا اثر ان لوگوں میں زیادہ تھا جنہیں بچپن میں دمہ کی تشخیص ہوئی تھی۔

Follow us: Facebook, Twitter, Google News

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔