کیجریوال نے کورونا کی تیسری ممکنہ لہر سے نمٹنے کے لیے 5 ہزار صحت معاونین تیار کرنے کا کیا اعلان

دہلی کے وزیر اعلیٰ اروند کیجریوال کا کہنا ہے کہ ’’پہلی اور دوسری لہر کے دوران میڈیکل اور پیرا میڈیکل اسٹاف کی کمی محسوس ہوئی، یہ فیصلہ کمی کو پورا کرنے کے لئے لیا گیا ہے۔‘‘

اروند کیجریوال، تصویر آئی اے این ایس
اروند کیجریوال، تصویر آئی اے این ایس
user

پریس ریلیز

نئی دہلی: دہلی حکومت نے صحت کے معاونین کی حیثیت سے پانچ ہزار نوجوانوں کو تربیت دینے کا فیصلہ کیا ہے۔ وزیر اعلی اروند کیجریوال نے کہا کہ دہلی حکومت کورونا کی ممکنہ تیسری لہر کو مدنظر رکھتے ہوئے پانچ ہزار صحت معاونین تیار کرے گی۔ پہلی اور دوسری لہر کے دوران طبی اور پیرامیڈیکل عملے کی کمی تھی۔ اس کو مدنظر رکھتے ہوئے، یہ فیصلہ لیا گیا ہے۔ آئی پی یونیورسٹی 9 میڈیکل انسٹی ٹیوٹ میں نرسنگ، پیرا میڈیکس، ہوم کیئر، بلڈ پریشر کی پیمائش، ویکسینیشن وغیرہ کی بنیادی تربیت فراہم کرے گی۔ وزیراعلیٰ نے کہا کہ صحت کے معاونین ڈاکٹروں اور نرسوں کے معاونین کی حیثیت سے کام کریں گے اور وہ خود فیصلہ نہیں کرسکیں گے۔ ان کی مدد سے، ڈاکٹر زیادہ موثر انداز میں کام کر سکیں گے اور مریضوں کی دیکھ بھال بھی بہت اچھے طریقے سے کر سکیں گے۔ اس کے لئے 18 سال سے زیادہ عمر کے 12 ویں کلاس پاس نوجوان 17 جون سے آن لائن درخواست دے سکتے ہیں اور ان کی تربیت 28 جون سے 500-500 کے بیچوں میں شروع ہوگی۔ مجھے لگتا ہے کہ اس فیصلے سے ہماری تیسری لہر کے لئے جاری تیاریوں کو زبردست فروغ ملے گا۔

وزیر اعلی اروند کیجریوال نے آج ڈیجیٹل پریس کانفرنس کر کے کورونا کی ممکنہ تیسری لہر کے پیش نظر دہلی حکومت کی جانب سے کی جا رہی تیاریوں کے حوالے سے ایک اہم فیصلے کا اعلان کیا۔ وزیراعلیٰ نے کہا کہ جیسا کہ آپ سب دیکھ رہے ہیں کہ اگر دہلی میں پچھلے کچھ دنوں سے تیسری لہر آجائے تو پھر دہلی کو اس سے بچانے کے لئے تیاریاں کی جا رہی ہیں۔ میں نے پچھلے کچھ دنوں میں متعدد اسپتالوں کا بھی دورہ کیا تاکہ ممکنہ تیسری لہر کی تیاریوں کا جائزہ لیا جاسکے۔ دہلی میں بہت سے نئے آکسیجن پلانٹس بھی لگائے جارہے ہیں۔ ممکنہ تیسری لہر کے لئے بہت ساری تیاریاں کی جارہی ہیں، جن میں آکسیجن کنسٹریٹر، آکسیجن سلینڈر اور آکسیجن اسٹوریج ٹینک شامل ہیں۔ لیکن اگر تیسری لہر آتی ہے، تو جیسا کہ ہم نے پہلی اور دوسری لہر میں دیکھا کہ طبی اور پیرا میڈیکل عملے کی بہت بڑی کمی ہے۔ اس بات کو مدنظر رکھتے ہوئے، دہلی حکومت نے 5000 صحت کے معاونین کو تیار کرنے کا ایک بہت ہی بہتر منصوبہ بنایا ہے۔ انہیں تکنیکی زبان میں کمیونٹی نرسنگ اسسٹنٹس بھی کہا جاتا ہے۔


وزیر اعلی اروند کیجریوال نے کہا کہ 5 ہزار نوجوانوں کو یہ تربیت دی جائے گی۔ دو ہفتوں کی یہ تربیت آئی پی یونیورسٹی فراہم کرے گی اور دہلی کے 9 بڑے طبی ادارے ہیں، جہاں ان لوگوں کو بنیادی تربیت دی جائے گی۔ یہ 5 ہزار، جو صحت معاون یا کمیونٹی نرسنگ اسسٹنٹس بنیں گے، وہ ڈاکٹروں اور نرسوں کے معاونین کی حیثیت سے کام کریں گے اور وہ خود فیصلہ نہیں کرسکیں گے۔ ڈاکٹروں نے انہیں جو بھی دیا، نرسیں بھی وہی کام دیں گی۔ ان افراد کو بنیادی نرسنگ، پیرامیڈکس، زندگی بچانے، ابتدائی طبی امداد، گھر کی دیکھ بھال وغیرہ کی تربیت دی جائے گی۔ انہیں بنیادی تربیت دی جائے گی۔ جیسے آکسیجن کی پیمائش، بلڈ پریشر کی پیمائش، ویکسین کیسے لگائی جائے، اگر ویکسینیشن کروانی ہے تو وہ کیسے کرتے ہیں۔ مریضوں کی دیکھ بھال میں، لنگوٹ تبدیل کرنے، نمونہ جمع کرنے، کنسٹریٹر کیسے کام کرتا ہے، سلینڈر کیسے لگانا ہے، ماسک کیسے لگانا ہے، وغیرہ جیسے کاموں میں تربیت دی جائے گی۔

وزیر اعلی اروند کیجریوال نے کہا کہ فرض کریں کہ ہم نے ایک بہت بڑا کووڈ 19 کیئر سینٹر بنایا ہے، پھر اگر ایسے بہت سے معاونین کو ڈاکٹر کے ساتھ ساتھ رکھا جائے تو وہ موثر انداز میں کام کرسکیں گے اور مریض کی دیکھ بھال بھی بہت اچھی ہو۔ ایک اچھے طریقے سے ہو. ہم ان پانچ ہزار لوگوں کو تربیت دیں گے اور انہیں چھوڑ دیں گے۔ جب بھی ان کی ضرورت ہوگی، انہیں بلایا جائے گا اور انہیں کام کرنے کے جتنے دن دیئے گئے ہیں ان کی ادائیگی کی جائے گی۔ اس کے لئے 17 جون سے آن لائن درخواستیں دی جاسکتی ہیں اور ان افراد کی تربیت 28 جون سے شروع ہوگی۔ انہیں 500-500 افراد کے بیچوں میں تربیت دی جائے گی۔ یعنی، ایک بیچ 500 افراد پر مشتمل ہوگا۔ یہ تربیت دو ہفتوں کے لئے ہوگی اور دو ہفتوں کے بعد دوبارہ دوسرا بیچ شروع کیا جائے گا۔ اس طرح سے کل 5 ہزار افراد کو تربیت دی جائے گی۔


وزیراعلیٰ نے مزید کہا کہ جو لوگ بارہویں جماعت پاس ہیں وہ ہیلتھ اسسٹنٹ کی تربیت لینے کے اہل ہیں اور ان کی عمر 18 سال سے زیادہ ہونی چاہیے اور لوگوں کو 'پہلے آئیں، پہلے خدمت کریں' کی بنیاد پر لیا جائے گا۔ مجھے لگتا ہے کہ اس سے ہماری تیسری لہر کی ممکنہ تیاریوں کو بہت تقویت ملے گی۔ اگر تیسری لہر آئے گی تو انسانی طاقت اس کے لئے تیار ہوگی۔ میں ایک بار پھر امید کرتا ہوں اور خدا سے دعا کرتا ہوں کہ تیسری لہر نہ آئے۔ لیکن انگلینڈ اور برطانیہ سے خبر آرہی ہے کہ وہاں تیسری لہر آگئی ہے۔ لہذا، پوری دنیا میں ہونے والی کورونا کی ترقی کو مدنظر رکھتے ہوئے، ہمیں اپنی تیاری میں کسی قسم کی کوتاہی نہیں کرنا چاہیے۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔