پاکستان: جسٹس عائشہ کی ترقی پر ہنگامہ، وکلاء نے عدالتی کارروائیوں کے بائیکاٹ کی دی دھمکی

جوڈیشیل کمیشن آف پاکستان کی میٹنگ 6 جنوری کو ہونی تھی۔ جسٹس ملک لاہور ہائی کورٹ کے سینئرٹی آرڈر میں چوتھے نمبر پر ہیں، منتخب ہونے کی صورت میں وہ پاکستان کی پہلی خاتون جج ہوں گی۔

جسٹس عائشہ اے۔ ملک، تصویر بشکریہ iawj2021auckland.com
جسٹس عائشہ اے۔ ملک، تصویر بشکریہ iawj2021auckland.com
user

یو این آئی

اسلام آباد: پاکستان بار کونسل (پی بی سی) اور دیگر بار ایسوسی ایشن نے چیف جسٹس آف پاکستان کو خبردار کیا ہے کہ اگر جسٹس عائشہ اے۔ ملک کی ترقی ملتوی نہ کی گئی تو سپریم کورٹ کی تمام عدالتی کارروائیوں کا بائیکاٹ کریں گے۔ جوڈیشیل کمیشن آف پاکستان کی میٹنگ 6 جنوری کو ہونی تھی۔ جسٹس ملک لاہور ہائی کورٹ کے سینئرٹی آرڈر میں چوتھے نمبر پر ہیں۔ منتخب ہونے کی صورت میں وہ پاکستان کی پہلی خاتون جج ہوں گی۔

دی ڈان کی منگل کی رپورٹ کے مطابق پیر کو اجلاس کے بعد پی بی سی کے نائب صدر خوشدل خان اور ایگزیکٹو کمیٹی کے چیئرمین محمد مسعود چشتی نے کہا کہ اگر 6 جنوری کا اجلاس منسوخ نہ کیا گیا تو ملک کی تمام عدالتوں میں تمام بار ایسوسی ایشن بائیکاٹ کریں گی۔


خوشدل خان نے کہا کہ وہ جسٹس ملک کو عورت ہونے کی وجہ سے نشانہ نہیں بنا رہے ہیں۔ ہمارا احتجاج صرف سنیارٹی اصول کے احترام تک محدود ہے۔ پارلیمنٹ کو آئین میں ترمیم کرنی چاہیے اور ٹاپ پر دو یا زیادہ خاتون ججوں کو جوڑ کر سپریم کورٹ میں 17 ججوں کی موجودہ تعداد میں اضافہ کرنا چاہیے۔وکلاء کا کہنا ہے کہ جسٹس ملک کی نامزدگی سنیارٹی اصول کے منافی ہے۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔