پاکستان کے دوسرے سب سے بڑے نیول ایئر اسٹیشن پر حملہ، ’بی ایل اے‘ نے قبول کی ذمہ داری

بلوچستان-لبریشن آرمی (بی ایل اے) کی مجید بریگیڈ نے پاکستان کے دوسرے سب سے بڑے نیول ایئر سٹیشن پر حملے کی ذمہ داری قبول کر لی ہے

<div class="paragraphs"><p>تصویر سوشل میڈیا</p></div>

تصویر سوشل میڈیا

user

قومی آوازبیورو

اسلام آباد: پاکستان کے دوسرے بڑے نیول ایئر اسٹیشن پر بڑا حملہ ہوا ہے۔ یہ حملہ بلوچستان کے علاقے تربت میں واقع پی این ایس صدیقی نیول ایئر اسٹیشن پر ہوا۔ پاکستان کی متعدد میڈیا رپورٹس کے مطابق بلوچستان لبریشن آرمی (بی ایل اے) کی مجید بریگیڈ نے نیول ایئر اسٹیشن پر حملے کی ذمہ داری قبول کر لی ہے۔ دراصل، بی ایل اے بلوچستان میں چینی سرمایہ کاری سے خوش نہیں ہے۔

بلوچستان لبریشن آرمی نے دعویٰ کیا کہ اس کے لوگوں نے نیول ایئر سٹیشن میں دراندازی کی اور ایک درجن سے زیادہ لوگوں کو قتل کر دیا۔ اس کے فوری بعد سیکورٹی اہلکاروں کو بڑھا دیا گیا ہے اور مسلسل گشت جاری ہے۔ مجید بریگیڈ کے لوگوں کے خلاف کارروائی جاری ہے۔


یہ واقعہ ایسے وقت میں پیش آیا ہے جب حال ہی میں بلوچ لبریشن آرمی (بی ایل اے) کے دہشت گرد بموں اور بھاری گولہ بارود سے لیس گوادر پورٹ اتھارٹی کمپلیکس میں داخل ہوئے تھے۔ دریں اثناء مکران کے کمشنر سعید احمد عمرانی نے کہا کہ کیمپس میں داخل ہونے کی کوشش کرنے والے کم از کم سات حملہ آوروں کو سکیورٹی فورسز نے جوابی کارروائی کرتے ہوئے روکا اور ان کے حملے کو ناکام بنا دیا۔

بی ایل اے کا یہ حملہ پاکستان میں دہشت گردانہ سرگرمیوں میں اضافے کے درمیان ہوا ہے۔ پاکستانی سیکورٹی فورسز دہشت گرد گروہوں بشمول تحریک طالبان پاکستان (ٹی ٹی پی) اور بلوچ لبریشن آرمی (بی ایل اے) اور ان سے وابستہ تنظیموں کو جڑ سے اکھاڑ پھینکنے کے لیے ٹارگٹڈ انٹیلی جنس پر مبنی آپریشنز (آئی بی اوز) کر رہی ہیں۔ فروری میں پاکستان میں 90 سے زائد دہشت گرد حملے ہو چکے ہیں۔

Follow us: Facebook, Twitter, Google News

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔


/* */