افغانستان میں پریس کی آزادی اور صحافیوں پر بڑھتے حملوں کی ’آئی ایف جے‘ نے مذمت کی

طالبان نے اقتدار پر قبضہ کرنے کے بعد شروع میں اپنے آپ کو خواتین کے حقوق کے حامی کے طور پر پیش کرنے کی کوشش کی لیکن بعد میں میڈیا ہاؤسز کو ہدایت دی کہ وہ خواتین کی قیادت میں پروگرامز بند کریں۔

تصویر سوشل میڈیا
تصویر سوشل میڈیا
user

یو این آئی

کابل: انٹرنیشنل فیڈریشن آف جرنلسٹس (آئی ایف جے) نے کہا ہے کہ جب سے طالبان نے افغانستان میں اقتدار سنبھالا ہے، تب سے صحافیوں کی آزادی اور صحافیوں کی حفاظت کو خطرہ لاحق ہو گیا ہے، اور میڈیا کے افراد کو ایک سنگین صورتحال کا سامنا ہے۔ حملے بڑھ گئے ہیں جس کی وہ مذمت کرتا ہے۔

آئی ایف جے نے افغانستان نیشنل جرنلسٹس یونین (اے این جے یو) کی رپورٹ کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ 15 اگست کو طالبان کے کابل پر قبضے کے بعد سے افغان صحافیوں اور میڈیا ورکرز کی موجودہ صورت حال کو دیکھایا جائے، جو آزادی کے تناظر میں اٹھائے جانے والے خدشات کی تصدیق کرتا ہے۔


اے این جے یو نے ملک بھر کے 28 صوبوں سے 1،379 صحافیوں اور میڈیا کے عملے کا سروے کیا۔ آئی ایف جے نے کہا کہ اس کے اتحادیوں کے نتائج نے افغان میڈیا سیکٹر کو درپیش دشمنانہ ماحول کو اجاگر کیا ہے۔ رپورٹ میں خواتین صحافیوں کو درپیش سنگین خطرات پر بھی روشنی ڈالی گئی ہے۔ ملک میں 67 فیصد صحافی اور میڈیا کے نمائندے خواتین ہیں، جن کی زندگیاں خطرے میں ہیں۔

طالبان نے اقتدار پر قبضہ کرنے کے بعد شروع میں اپنے آپ کو خواتین کے حقوق کے حامی کے طور پر پیش کرنے کی کوشش کی لیکن بعد میں میڈیا ہاؤسز کو ہدایت دی کہ وہ خواتین کی قیادت میں پروگرامز بند کریں اور خواتین صحافیوں کو ان کے عہدوں سے ہٹا دیں۔ این جے یو کی رپورٹ کے مطابق سروے میں شامل 70 فیصد سے زیادہ لوگوں کو دھمکیاں موصول ہوئی ہیں۔ جب سے طالبان اقتدار میں آیا ہے، ان میں سے بیشتر کو زبانی دھمکی دی گئی اور 21 فیصد نے اشارہ کیا کہ انہیں جسمانی طور پر دھمکی دی گئی ہے۔ رپورٹس سے پتہ چلتا ہے کہ صحافیوں اور میڈیا اہلکاروں پر حملے نہ صرف طالبان کرتے ہیں بلکہ 40 فیصد حملے نامعلوم حملہ آور کرتے ہیں۔


واضح رہے کہ افغانستان میں تعینات غیر ملکی فوجیوں کے انخلا کے نتیجے میں میڈیا انڈسٹریز زبردست معاشی اثرات کے ساتھ ساتھ سکیورٹی خدشات سے بھی دوچار ہے۔ طالبان کے اقتدار سنبھالنے کے بعد سے کم از کم 67 فیصد صحافی اور میڈیا اہلکار بے روزگار ہو چکے ہیں۔ افغانستان میں میڈیا کی صلاحیت کو محدود کرنے کے احکامات روز بروز بڑھ رہے ہیں۔ 19 ستمبر کو میڈیا کے لئے 11 جامع قوانین نافذ کیے گئے تھے جن سے صوابدیدی مواد کو سنسر کیا گیا اور پریس کی آزادی کو محدود کیا گیا۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔