یوروپی یونین کی نئی ہجرت پالیسی یونان کی صورتحال کو سنبھالنے میں ناکام

رافیل شلہو نے کہا کہ یورپی یونین نے اپنی پرانی پالیسیز کی ناکامی کو تسلیم کیا ہے جبکہ نئے ہجرت کے معاہدے کا مقصد یورپی یونین میں ذمہ داری- شراکت داری کو متوازن کرنا ہے۔

تصویر یو این آئی
تصویر یو این آئی
user

یو این آئی

برسیلس: یورپی یونین نے اپنی ہجرت پالیسیز کی کمی اور خامی کو تسلیم کیا ہے اور ہجرت پر ایک نئی پالیسی کو نافذ کرنے کا فیصلہ کیا ہے، لیکن یہ یونان میں انسانی صورتحال میں بہتری لانے کی اہل نہیں ہے، جہاں کافی تعداد میں مہاجر ہیں۔ یہ کہنا ہے آکسفرم چیرٹی کے صلاح کار رافیل شلہو کا۔

انہوں نے پیر کے روز کہا کہ یورپی کمیشن نے ستمبر میں یورپی یونین کی ہجرت کی پالیسیز میں بہتری کے لیے ہجرت اور پناہ گزیں ہونے پر ایک نئے معاہدے کی تجویز پیش کی تھی۔ نیا ضابطہ مؤثر بارڈر طریقہ کار پر عمل درآمد اور یوروپی یونین کی تمام ریاستوں کو ہجرت کے نظام میں حصہ داری کے لیے تیار کیا گیا ہے۔

رافیل شلہو نے کہا کہ یورپی یونین نے اپنی پرانی پالیسیز کی ناکامی کو تسلیم کیا ہے جبکہ نئے ہجرت کے معاہدے کا مقصد یورپی یونین میں ذمہ داری- شراکت داری کو متوازن کرنا ہے، یہ گزشتہ کئی ناقص پالیسیز کی نقل ہے جس کے ہدف پر پہلے سے ہی سوال اٹھ رہے ہیں‘۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔


next