ریٹائرڈ خاتون ٹیچر نے لگائی ٹرمپ کی کلاس، وائٹ ہاؤس کا خط اصلاح کے بعد لوٹایا

صدر ٹرمپ اپنے بے باک اور متنازع بیانات کے لئے زیر بحث رہتے ہیں، لیکن اس بار ان کا ایک خط زیر بحث بن گیا ہے، غلطیوں سے بھرا یہ خط سوشل میڈیا پر وائرل ہو رہا ہے اور وائٹ ہاؤس کا مذاق اڑایا جارہا ہے۔

تصویر سوشل میڈیا
تصویر سوشل میڈیا
user

قومی آوازبیورو

وائٹ ہاؤس کی طرف سے امریکہ کی ایک ریٹائرڈ خاتون ٹیچر وون میسن (61) کو جوابی خط ارسال کیا گیا تھا ، انگریزی زبان میں تحریر شدہ اس خط میں ٹیچر کو زبان اور گرامر کی غلطیاں مل گئیں، ان کی انہوں نے نشاندہی کر کے وائٹ ہاؤس کو واپس بھیج دیا۔ وون میسن نے خط کی اصلاح کرتے ہوئے غلطیوں پر پیلے رنگ کے مارکر سے نشانات لگا دیئے اور کئی غلطیوں پر تبصرے کے ساتھ انہوں نے خط لکھنے کو لے کر بھی اپنے سجھاؤ درج کئے۔ انہوں نے خط کے اوپر بائیں طرف گرامر اور لکھنے کے انداز کی جانچ کرنے کی ہدایت دی اور نیچے لکھے نیشن لفظ کی شروعات میں کیپٹل ’این‘ لکھے جانے پر مایوسی ظاہر کرتے ہوئے لکھا، ’’او ایم جی، دِس اِس رونگ۔‘‘

ریٹائرڈ خاتون ٹیچر نے لگائی ٹرمپ کی کلاس، وائٹ ہاؤس کا خط اصلاح کے بعد لوٹایا

وائٹ ہاؤس کی طرف سے یہ خط 3 مئی 2017 کو جاری ہوا تھا اور اس پر امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے دستخط بھی ہیں۔

جارجیا کے اٹلانٹا کی رہنے والی 61 سالہ وون میسن ہائی اسکول کی ٹیچر رہی ہیں اور وہ گزشتہ سال ہی ریٹائرہوئی ہیں۔ وون میسن نے نیو یارک ٹائمز کو بتایا ’’وہ ایک خراب خط تھا اورمیں خراب تحریر کو برداشت نہیں کر سکتی۔ اگر کوئی بہتر کر سکتا ہے تو اسے بہتر کرنا چاہئے۔‘‘

اٹلانٹا کی رہائشی میسن ایک ڈیموکریٹ ہیں ۔ انہوں نے یہ خط لکھ کر ٹرمپ کو اسی سال فروری میں فلورڈا کے پارک لینڈ میں ایک اسکول میں گولہ باری کے تمام 17 مہلوکین کے گھر جانے کی صلاح دی تھی۔ میسن نے بتایا ’’میں نے انہیں ناراضگی کے ساتھ لوگوں کو حقیقت بتانے کے لئے کہا‘‘ سابقہ ٹیچر کے مطابق انہیں جو خط موصول ہوا اس میں ان کے ایک بھی ایشو کا ذکر نہیں تھا۔ بلکہ گولی باری کے بعد کی گئی کارروائی کا ذکر تھا۔

میسن نے اس کے بعد وائٹ ہاؤس کو لکھے ایک خط میں پوچھا ’’کیا آپ نے اپنی گرامر اور الفاظ کی جانچ کی ہے؟‘‘ میسن نے اعتراف کیا کہ بے حد مایوسی کے ساتھ انہوں نے وائٹ ہاؤس کو خط لکھا تھا کیوں کہ وہ چاہتی تھیں کہ واقعہ کے متاثرین کے حق میں کچھ کیا جائے۔

next