من کی بات: کورونا ایک ایسی آفت ہے جس کا دنیا کے پاس کوئی علاج نہیں... پی ایم مودی

پی ایم مودی نے ’من کی بات‘ پروگرام میں کہا کہ ”مزدوروں کی طاقت سے مشرقی ہندوستان کی ترقی کے وسیع امکانات کھلے ہیں اور حکومت نے اس سمت میں قدم اٹھانا شروع کردیا ہے۔“

تصویر سوشل میڈیا
تصویر سوشل میڈیا
user

یو این آئی

نئی دہلی: وزیراعظم نریندر مودی نے کورونا وائرس کی عالمی وبا کے دور میں ملک بھر میں مزدوروں کو ہوئی پریشانی اور دکھ تکلیف کے لئے ہمدردی کا اظہار کیا ہے اور کہا کہ ان مزدوروں کی طاقت سے مشرقی ہندوستان کی ترقی کے وسیع امکانات بھی کھلے ہیں اور حکومت نے اس سمت میں قدم اٹھانا شروع کردیا ہے۔ پی ایم مودی نے آکاش وانی پر نشر ’من کی بات‘ پروگرام میں کہا کہ کورونا وائرس کے خلاف لڑائی کا یہ راستہ لمبا ہے۔ یہ ایک ایسی قدرتی آفت ہے جس کا پوری دنیا کے پاس کوئی علاج ہی نہیں ہے، جس کا پہلے کبھی کوئی تجربہ ہی نہیں ہے، تو ایسے میں نئے نئے چیلنجوں اور اس کی وجہ سے پریشانیاں اور ہم تجربہ بھی کررہے ہیں۔ یہ دنیا کے ہر کورونا متاثر ملک میں ہو رہا ہے اور اس لئے ہندوستان بھی اس سے اچھوتا نہیں ہے۔

وزیراعظم نے کہا کہ ہمارے ملک میں بھی کوئی طبقہ ایسا نہیں ہے جو مشکل میں نہ ہو، پریشانی میں نہ ہو، اور اس بحران کی سب سے بڑی چوٹ، اگر کسی پر پڑی ہے، تو ہمارے غریب مزدورطبقے پر پڑی ہیں۔ ان کی تکلیف اور ان کا درد الفاظ میں بیان نہیں کیا جا سکتا۔ ہم میں سے کون ایسا ہوگا جو ان کی اور ان کے کنبے کی تکلیفوں کا تجربہ نہ کر رہا ہو۔ ہم سب مل کر ان کی تکلیف اور درد کو بانٹنے کی کوشش کررہے ہیں۔

مودی نے مزدور اسپیشل ٹرینوں کی سمت اشارہ کرتے ہوئے کہا کہ ریلوے کے ساتھ دن رات لگے ہوئے ہیں۔ مرکز ہو، ریاست ہو، مقامی سوراج کی تنظیمیں ہوں، ہر کوئی دن رات محنت کر رہا ہے۔ جس طرح ریلوے کے ملازمین آج لگے ہوئے ہیں، وہ بھی ایک طرح سے اول صف میں کھڑے کورونا سپاہی ہی ہیں۔لاکھوں مزدوروں کو، ٹرینوں سے، اور بسوں سے، صحیح سلامت لے جانا، ان کے کھانے پینے کی فکرکرنا، ہر ضلع میں قرنطینہ مراکز کا انتظام کرنا، سبھی کی ٹیسٹنگ، چیک اپ، علاج کا انتظام کرنا، یہ سبھی کام مسلسل بہت بڑے پیمانے پر چل رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ جو منظر آج ہم دیکھ رہے ہیں، اس سے ملک کو ماضی میں جو کچھ ہوا، اس کے جائزے اور مستقبل کے لئے سیکھنے کا موقع بھی ملا ہے۔ آج ہم ہمارے مزدوروں کے درد میں، ملک کے مشرقی حصے کے درد کو دیکھ سکتے ہیں۔ جس مشرقی حصے میں ملک کا گروتھ انجن بننے کی صلاحیت ہے، جس کے مزدوروں کی طاقت میں، ملک کو نئی اونچائی پر لے جانے کی صلاحیت ہے، اس مشرقی حصے کی ترقی بہت ضروری ہے۔

پی ایم مودی نے کہا، ’’مشرقی ہندوستان کی ترقی سے ہی، ملک کی اقتصادی ترقی ممکن ہے۔ ملک نے جب مجھے خدمت کا موقع دیا تبھی سے ہم نے مشرقی ہندوستان کی ترقی کو ترجیح دی ہے۔ مجھے اطمینان ہے کہ گزشتہ برسوں میں اس سمت میں بہت کچھ ہوا ہے اور اب نقل مکانی کرنے والے مزدوروں کو دیکھتے ہوئے بہت کچھ نئے قدم اٹھانا بھی ضروری ہوگئے ہیں، اور ہم مسلسل اس سمت میں آگے بڑھ رہےہیں۔‘‘

انہوں نے کہا کہ مشرقی ہندوستان میں کہیں مزدوروں کے اسکل میپنگ کا کام ہو رہا ہے، کہیں اسٹارٹ اپس اس کام میں جٹے ہیں، کہیں مزدور امیگریشن کمیشن بنانے کی بات ہو رہی ہے۔ اس کے علاوہ مرکزی حکومت نے ابھی جو فیصلے لئے ہیں، اس سے بھی گاؤں میں روزگار، اپنا روزگار، چھوٹی صنعتوں سے جڑے وسیع امکانات کھلے ہیں۔ یہ فیصلے، ان حالات کے حل کے لئے ہیں، خود مختار ہندوستان کےلئے ہیں۔

next