کورونا پر کیسے ملے گی فتح، ’ٹیسٹنگ‘ میں مغربی بنگال اور بہار سب سے پیچھے

انڈین کونسل آف میڈیکل ریسرچ کی جانب سے پیش رپورٹ کے مطابق مغربی بنگال، بہار، اتر پردیش اور مدھیہ پردیش میں حالات بہت خراب ہیں۔ یہ ریاستیں کورونا ٹیسٹ کے معاملے میں بہت پیچھے ہیں۔

کورونا وائرس
کورونا وائرس
user

قومی آوازبیورو

کورونا وبا کی دہشت کےدرمیان ڈاکٹرس اور ماہرین بار بار اس بات کو دہرا رہے ہیں کہ اگر اس وائرس پر قابو پانا ہے تو ٹیسٹنگ کی تعداد بڑھانی ہوگی، لیکن ہندوستان میں اب بھی کورونا کو لے کر ٹیسٹنگ بہت دھیمی رفتار کے ساتھ آگے بڑھ رہی ہے۔ سب سے خراب صورت حال تو مغربی بنگال اور بہار کی ہے جہاں ہر 10 لاکھ کی آبادی پر بالترتیب محض 230 اور 267 لوگوں کا ٹیسٹ ہوا ہے۔

ایک رپورٹ کے مطابق مغربی بنگال، بہار، اتر پردیش اور مدھیہ پردیش میں حالات بہت خراب ہیں۔ یہ ریاستیں کورونا ٹیسٹ کے معاملے میں قومی اوسط سے 25 فیصد تک پیچھے چل رہی ہیں۔ ملک بھر میں اب تک 10 لاکھ سے زیادہ لوگوں کا کورونا ٹیسٹ کرایا جا چکا ہے اور اس کے ساتھ ہی فی 10 لاکھ کی آبادی پر ٹیسٹ بڑھ کر 818 ہو گیا ہے۔ لیکن موجودہ وقت میں مغربی بنگال اور بہار کی حالت افسوسناک ہے۔

کورونا وائرس کے بڑھتے انفیکشن کے درمیان انڈین کونسل آف میڈیکل ریسرچ کی جانب سے جو اعداد و شمار جاری کیے گئے ہیں وہ تشویش ناک ہیں۔ مغربی بنگال اور بہار کے بعد اتر پردیش کی حالت بھی بہت اچھی نظر نہیں آ رہی ہے۔ وہاں ہر 10 لاکھ کی آبادی پر 429 ٹیسٹ کرائے جا رہے ہیں جب کہ مدھیہ پردیش میں یہ تعداد محض 642 ہے۔

انڈین کونسل آف میڈیکل ریسرچ کے ذریعہ پیش کردہ اعداد و شمار کو مدنظر رکھتے ہوئے مرکزی وزارت صحت نے فکرمندی کا اظہار کیا ہے۔ وزارت صحت کا کہنا ہے کہ کئی ریاستوں میں ٹیسٹ کٹ صحیح نہیں ملنے کی وجہ سے جانچ میں وقت لگ رہا ہے۔ اس سے واضح ہو گیا ہے کہ ریاست اگر صحیح طریقے سے ٹیسٹ کریں تو انفیکشن کی تعداد میں تیزی دیکھی جا سکتی ہے۔

next