بی جے پی رکن اسمبلی کا قابل اعتراض بیان، کہا ’اسلام میں 50 عورتیں رکھنے کی روایت‘

سریندر سنگھ نے اسلام کے تعلق سے متنازعہ بیان دیتے ہوئے کہا کہ اس مذہب میں 50 عورتیں رکھنے اور 1050 بچے پیدا کرنے کی روایت ہے۔

تصویر سوشل میڈیا
تصویر سوشل میڈیا
user

قومی آوازبیورو

اتر پردیش کے بلیا سے بی جے پی رکن اسمبلی سریندر سنگھ نے مسلم طبقہ اور اسلام کے تعلق سے انتہائی متنازعہ بیان دیا ہے۔ اپنے بیانوں کے لیے اکثر تنقید کا نشانہ بننے والے سریندر سنگھ نے مسلم طبقہ کی آبادی کو لے کر سوال کھڑتے ہوئے کہا کہ ’’مسلم مذہب میں 50 عورتیں رکھنے اور 1050 بچوں کو پیدا کرنے کی روایت ہے۔ یہ کوئی روایت نہیں بلکہ جانوروں والی خصلت ہے۔‘‘


یہ پہلی بار نہیں ہے جب بی جے پی رکن اسمبلی سریندر سنگھ نے متنازعہ بیان دیا ہے۔ اس سے پہلے بھی وہ کئی بار قابل اعتراض بیانات دے چکے ہیں۔ گزشتہ سال جولائی کے مہینے میں بی جے پی رکن اسمبلی سریندر سنگھ نے عصمت دری کے بڑھتے واقعات پر متنازعہ بیان دیا تھا۔ رکن اسمبلی سریندر سنگھ نے ملک میں عصمت دری کے بڑھتے واقعات پر کہا تھا کہ میں دعوے کے ساتھ کہہ سکتا ہوں کہ بھگوان رام بھی آ جائیں گے تو ان واقعات پر قابو پانا ممکن نہیں ہے۔

بی جے پی رکن اسمبلی نے عصمت دری کے واقعات پر قابو پانے کا طریقہ بھی بتایا تھا۔ انھوں نے کہا تھا کہ ’’یہ سبھی کا فرض ہے کہ سماج کے سبھی لوگوں کو اپنی فیملی سمجھیں، سبھی کو اپنی بہن سمجھنے کے مذہن پر عمل کرنا چاہیے۔ انسانیت کی طاقت پر ہی ان واقعات پر قابو پایا جا سکتا ہے۔‘‘


گزشتہ سال جون کے مہینے میں رکن اسمبلی سریندر سنگھ نے ایک جلسہ عام کو خطاب کرتے ہوئے کہا تھا کہ ’’افسران سے اچھا کردار طوائفوں کا ہوتا ہے۔ وہ پیسہ لے کر کم از کم اپنا کام تو کرتی ہیں اور اسٹیج پر ناچتی ہیں، لیکن یہ افسران تو پیسہ لے کر بھی آپ کا کام کریں گے کہ نہیں، اس کی کوئی گارنٹی ہی نہیں ہے۔‘‘

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔


Published: 15 Jul 2019, 1:10 PM