ٹی آر پی گھوٹالہ: ارنب گوسوامی کو نوٹس دینے کے بعد گرفتار کیا جائے، ہائی کورٹ

ہائی کورٹ نے یہ فیصلہ گوسوامی کی جانب سے ٹی آر پی گھوٹالہ معاملے میں ممبئی پولیس کی جانب سے کی جانے والی تحقیقات کو چیلنج کرنے والی عرضداشت کی سماعت کے دوران دیا۔

تصویر یو این آئی
تصویر یو این آئی
user

یو این آئی

ممبئی: ممبئی ہائی کورٹ نے بدھ کے روز ممبئی پولیس کو ہدایت کی کہ وہ ریپبلک ٹی وی کے چیف ایڈیٹر ارنب گوسوامی کو ٹی آر پی گھوٹالہ کیس میں گرفتار کرنے یا پھر ان کے خلاف کوئی سخت کارروائی کا فیصلہ کرنے سے تین دن قبل پیشگی نوٹس جاری کریں اور پھر انہیں گرفتار کریں نیز وہ بھی اس صورت میں ہی کیا جا سکتا ہے جب دوران تحقیقات پولیس کو ان کے خلاف کوئی ٹھوس ثبوت دستیاب ہو جائے۔

ہائی کورٹ نے یہ فیصلہ گوسوامی کی جانب سے ٹی آر پی گھوٹالہ معاملے میں ممبئی پولیس کی جانب سے کی جانے والی تحقیقات کو چیلنج کرنے والی عرضداشت کی سماعت کے دوران دیا، جسے آج عدالت نے دونوں فریقین کی ابتدائی بحث کے اختتام کے بعد سماعت کے لئے قبول کر لیا۔

جسٹس ایس ایس شندے اور منیش پٹیل پر مشتمل دو رکنی بنچ نے یہ بھی حکم جاری کیا کہ درخواست گزار گوسوامی کے خلاف کارروائی سے قبل اگر ممبئ پولیس نوٹس جاری کرتی ہے تو عرض گزار کو اس کے خلاف عدالت سے رجوع کرنے کے لئے آزاد ہے۔ دوران سماعت عدالت نے یہ بھی مشاہدہ کیا کہ "درخواست گزار (ارنب گوسوامی) کی طرف سے پولیس کے خلاف سنگین خرابیوں کا الزام عائد کیا گیا ہے۔"

اسی درمیان ممبئی پولیس کے لئے چیف پبلک پراسیکیوٹر دیپک ٹھاکرے نے دوران سماعت عدالت کو آگاہ کیا کہ وہ 12 ہفتوں کے اندر درخواست گزاروں کے خلاف جاری تحقیقات کو مکمل کرلیں گے جسے عدالت نے منظور کرلیا۔

عدالت نے دوسری عدالت کے فیصلے کا تذکرہ کرتے ہوئے کہا کہ بھجن لال کے معاملے کی روشنی میں تفتیش جاری رہ سکتی ہے۔ "تفتیشی تحقیقاتی ایجنسی کا خصوصی دائرہ کار ہے، اس مرحلے پر عدالت کے ذریعہ تفتیش میں مداخلت نہیں کی جائے گی۔" عدالت نے مزید سماعت 28 جون تک ملتوی کر دی۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔