نیویارک گھومنے جائیں اور ’کورونا ویکسین‘ مفت پائیں، ٹورزم کمپنی کا آفر تنازعہ کا شکار!

ٹورزم کمپنی نے وضاحت کی ہے کہ جلد ہی ’پی فائزر ویکسین‘ امریکہ میں فروخت کے لیے دستیاب ہوگی (ممکن ہے 11 دسمبر سے)، پھر ہم کچھ وی وی آئی پی کلائنٹس کو یہ ویکسین دینے کے لیے تیار ہیں۔

تصویر Getty Images
تصویر Getty Images
user

تنویر

کورونا بحران کی وجہ سے دنیا کے کئی ممالک میں لاک ڈاؤن نافذ ہے اور سخت احتیاطی اقدام کیے جا رہے ہیں۔ اس وجہ سے سیاحتی سرگرمیاں پوری طرح سے ٹھپ پڑی ہوئی ہیں۔ چونکہ کئی ممالک میں ویکسین پر تحقیقی کام تیزی کے ساتھ جاری ہیں، اس لیے لوگ پرامید ہیں کہ جلد حالات بہتر ہو جائیں گے۔ اس درمیان ممبئی میں ایک ٹورزم کمپنی نے لوگوں کو ’ویکسین ٹورزم‘ کا آفر دیا ہے جو تنازعہ کا شکار بن گیا ہے۔

دراصل ایڈل وائس میوچوئل فنڈس کی سی ای او رادھیکا گپتا نے پیر کے روز ایک واٹس ایپ میسج کا اسکرین شاٹ اپنے ٹوئٹر ہینڈل سے شیئر کیا جو سوشل میڈیا پر وائرل ہو گیا ہے۔ یہ میسج ایک ٹورزم کمپنی کا ہے جو دسمبر میں امریکہ کے لیے پرکشش پیکیج کی پیش کش کر رہی تھی۔ کمپنی کے آفر میں ممبئی سے نیو یارک اور پھر واپس ممبئی آنے کے لیے تین رات اور چار دن کا پیکیج ہے جو 1 لاکھ 74 ہزار 999 روپے میں ملے گا۔ اس خرچ میں ہوائی جہاز کا کرایہ اور ہوٹل میں رہنا شامل ہے۔ ساتھ ہی اس میں ناشتہ اور ویکسین کا ڈوز بھی دیا جائے گا جس کا تذکرہ میسج میں ہے۔ میسج میں بتایا گیا ہے کہ اس پیکیج کے تحت پہلے آؤ، پہلے پاؤ کی طرز پر بکنگ ہوگی۔


میسج وائرل ہونے کے بعد اس بات کو لے کر تنازعہ شروع ہو گیا کہ ابھی تو ویکسین کا ٹرائل مکمل بھی نہیں ہوا ہے، اور یہ بھی تذکرہ نہیں ہے کہ کون سا ویکسین دیا جائے گا۔ ہنگامہ بڑھنے کے بعد اشتہار دینے والی کمپنی نے بتایا کہ یہ صرف رجسٹریشن ہے۔ اس کے بعد کمپنی نے بتایا کہ وہ کون لوگ ہیں جنھیں ترجیحی بنیاد پر ویکسین دی جائے گی۔ کمپنی کا کہنا ہے کہ جلد ہی ’پی فائزر ویکسین‘ امریکہ میں فروخت کے لیے دستیاب ہوگی (ممکن ہے 11 دسمبر سے)، پھر ہم کچھ وی وی آئی پی کلائنٹس کو یہ ویکسین دینے کے لیے تیار ہیں۔

واضح رہے کہ ہندوستان میں اس وقت 5 ویکسین پر ٹرائل جاری ہے۔ کئی ہندوستانی دعویداروں جیسے کوویکسین، زائی-کوو ڈی کے فیز 2 کے ریزلٹس کے انتظار کے درمیان منگل کو وزیر صحت ہرش وردھن نے دعویٰ کیا کہ ہندوستانی کو ’پی فائزر‘ کے ٹیکے کی ضرورت پڑنے کا امکان کم ہے۔ دوسری طرف امریکہ میں فائزر-بایو اینٹیک اور ماڈرنا کے کورونا وائرس ٹیکوں کے بارے میں دعویٰ کیا جا رہا ہے کہ یہ 90 فیصد سے زیادہ اثردار ہیں۔ حال ہی میں ٹرائل کیے گئے آکسفورڈ-ایسٹراجنیکا ویکسین فیز 3 میں 70 فیصد اثردار رہا۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔


Published: 24 Nov 2020, 4:40 PM