آئندہ انتخابات میں 690 پولنگ اسٹیشن کا انتظام مکمل طور پر خواتین کارکنوں کے ہاتھ میں ہوگا: الیکشن کمیشن

چیف الیکشن کمشنر سشیل چندرا نے بتایا کہ ایسے پولنگ اسٹیشنوں پر سیکورٹی کے انتظامات سمیت ووٹنگ کے عمل کا سارا کام خواتین کے ہاتھ میں ہوگا۔

چیف الیکشن کمشنر / یو این آئی
چیف الیکشن کمشنر / یو این آئی
user

یو این آئی

نئی دہلی: الیکشن کمیشن نے اعلان کیا ہے کہ پانچ ریاستوں میں آئندہ اسمبلی انتخابات میں 690 ایسے پولنگ اسٹیشن ہوں گے جہاں انتخابی عملہ اور سیکورٹی اہلکاروں سمیت تمام انتخابی انتظام خواتین کے ہاتھ میں ہوں گے۔ اسی طرح ہر علاقے میں ایک پولنگ اسٹیشن پر صرف معذور کارکن ہی انتظام کریں گے۔

انتخابی تاریخوں کا اعلان کرتے ہوئے چیف الیکشن کمشنر سشیل چندرا نے گزشتہ روز بتایا کہ ’مکمل طور پر خواتین کے زیر انتظام پولنگ اسٹیشن' کی پہل صنفی مساوات اور خواتین کی شراکت میں اضافہ کے عزم کا حصہ ہے۔ انہوں نے بتایا کہ ایسے پولنگ اسٹیشنوں پر سیکورٹی کے انتظامات سمیت ووٹنگ کے عمل کا سارا کام خواتین کے ہاتھ میں ہوگا۔ اسی طرح ہر حلقے میں ایک ایک پولنگ اسٹیشن قائم کیا گیا ہے جس کا انتظام مختلف معذور اہلکار سنبھالیں گے۔


خیال رہے کہ الیکشن کمیشن نے اتر پردیش سمیت پانچ ریاستوں میں اسمبلی انتخابات کے سلسلہ میں ہفتہ کے روز دہلی کے وگیان بھون میں پریس کانفرنس طلب کی۔ اس دوران گوا، پنجاب، منی پور، اتراکھنڈ اور اتر پردیش کے اسمبلی انتخابات کی تاریخوں کا اعلان کیا گیا۔

الیکشن کمیشن کے مطابق پانچ ریاستوں میں پولنگ 7 مراحل میں ہوں گی اور پہلے مرحلہ کی ووٹنگ 10 فروری 2022 جبکہ آخری مرحلہ کی ووٹنگ 7 مارچ کو ہوگی۔ اس کے بعد 10 مارچ کو ووٹوں کی گنتی ہوگی اور اسی دن نتائج کا اعلان کیا جائے گا۔ پنجاب، گوا اور اتراکھنڈ کی پولنگ ایک-ایک مرحلہ میں، منی پور کی پولنگ 3 مراحل میں اور اتر پردیش کی پولنگ سب سے زیاد 7 مراحل میں مکمل ہوگی۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔