بی جے پی کے انتخابی نشان ’کمل‘ پر اٹھی انگلی، ہائی کورٹ نے الیکشن کمیشن سے مانگا جواب

سماجوادی پارٹی لیڈر کالی شنکر کے ذریعہ داخل عرضی پر سماعت چیف جسٹس گووند ماتھر اور جسٹس پیوش اگروال پر مشتمل بنچ نے کی۔ اس عرضی پر وکیل جی سی تیواری اور کپل تیواری نے بحث کی۔

تصویر UNI
تصویر UNI
user

تنویر

الٰہ آباد ہائی کورٹ میں داخل کی گئی ایک عرضی نے بی جے پی کے لیے مشکلات کھڑی کر دی ہے۔ پارٹی کے انتخابی نشان ’کمل‘ کے پھول پر انگلی اٹھائی گئی ہے اور سوال کیا گیا ہے کہ آخر قومی پھول کو بی جے پی بطور انتخابی نشان کس طرح استعمال کر رہی ہے۔ اس تعلق سے الٰہ آباد ہائی کورٹ نے انتخابی کمیشن کو نوٹس بھیج کر جواب طلب کیا ہے کہ کسی سیاسی پارٹی کو قومی پھول کمل انتخابی نشان کی شکل میں کس طرح دیا گیا۔

قابل ذکر ہے کہ بی جے پی گزشتہ 40 سالوں سے کمل کے پھول کو بطور انتخابی نشان استعمال کر رہی ہے۔ سماجوادی پارٹی لیڈر کالی شنکر نے اس تعلق سے مفاد عامہ عرضی داخل کی اور سوال اٹھایا کہ کسی سیاسی پارٹی کو انتخابی نشان پارٹی کے ’لوگو‘ کی شکل میں استعمال کرنے کا حق نہیں ہے۔ انتخابی نشان انتخاب تک کے لیے ہی محدود ہے۔ اس معاملے میں سماعت کرتے ہوئے ہائی کورٹ نے کہا کہ عرضی میں یہ ایشو نہیں اٹھایا گیا ہے کہ انتخابی نشان صرف انتخاب کے لیے الاٹ کیا جاتا ہے، دیگر کاموں کے لیے نہیں۔ تو پھر انتخابی نشان کا دیگر مقاصد سے استعمال کرنے کی اجازت کیوں دی جا رہی ہے۔‘‘


عرضی پر سماعت کے دوران عدالت نے یہ بھی کہا کہ کئی خواندہ ممالک میں انتخابی نشان نہیں ہے، لیکن ہندوستان میں انتخابی نشان سے انتخاب لڑا جا رہا ہے۔ انتخابی کمیشن کے وکیل نے ان نکات پر غور کرنے کے لیے وقت طلب کیا، جس پر عدالت نے جواب داخل کرنے کے لیے وقت دیتے ہوئے آئندہ سماعت کی تاریخ 12 جنوری 2021 مقرر کی۔

سماجوادی پارٹی لیڈر کالی شنکر کے ذریعہ داخل عرضی پر سماعت چیف جسٹس گووند ماتھر اور جسٹس پیوش اگروال کی بنچ نے کی۔ عرضی پر وکیل جی سی تیواری اور کپل تیواری نے بحث کی۔ عرضی دہندہ کالی شنکر کا کہنا ہے کہ عوامی نمائندہ ایکٹ 1951 اور انتخابی نشان (ریزرویشن اینڈ الاٹمنٹ) حکم 1968 کے تحت انتخابی کمیشن کو انتخاب لڑنے کے لیے قومی سیاسی پارٹی کو انتخابی نشان الاٹ کرنے کا حق ہے۔ انتخابی کمیشن کو ماڈل کوڈ آف کنڈکٹ کی خلاف ورزی کرنے پر پارٹی کی منظوری واپس لینے کا اختیار بھی ہے۔ اس درمیان عدالت نے عرضی دہندہ کو دیگر کسی سیاسی پارٹی کو بھی فریق بنانے کی چھوٹ دی ہے۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔