ملک کے سبھی اہم شعبوں کی حالت خستہ، مودی حکومت نہیں دے رہی توجہ: کانگریس

کانگریس لیڈر غلام نبی آزاد نے کہا کہ ’’گزشتہ 50 سالوں میں اتنی بے روزگاری کبھی نہیں تھی اور یہ لگاتار بڑھ رہی ہے۔ اعداد و شمار بتاتے ہیں کہ ہمارے ملک میں جتنی بے کاری ہے اس سے دوگنی بے روزگاری ہے۔‘‘

تصویر سوشل میڈیا
تصویر سوشل میڈیا
user

قومی آوازبیورو

دہلی میں اپوزیشن پارٹیوں کے لیڈروں نے آج معاشی بحران، بے روزگاری اور سی آر ای پی جیسے ایشوز پر تبادلہ خیال کیا۔ میٹنگ کے بعد کانگریس کے سینئر لیڈر غلام نبی آزاد نے پریس سے خطاب کرتے ہوئے ان باتوں کو سامنے رکھا۔ انھوں نے کہا کہ ’’آج کی میٹنگ ملک کی 13 یکساں نظریہ والی پارٹیوں کے درمیان ہوئی۔ اس میں بڑھتی بے روزگاری، معاشی اور زراعتی بحران سمیت کئی ایشوز پر تبادلہ خیال کیا گیا۔‘‘

غلام نبی آزاد نے کہا کہ ملک ایک ایسے وقت سے گزر رہا ہے جہاں ہر ایک شخص، چاہے تعلیم یافتہ ہو، کم تعلیم یافتہ ہو یا ناخواندہ، زراعت کرتا ہو، صنعت یا ٹریڈ چلاتا ہو، بزنس چلاتا ہو، وہ سب لوگ پریشان ہیں۔ انھوں نے کہا کہ ملک میں اگر کوئی پریشان نہیں ہے تو وہ ہے برسراقتدار بی جے پی کیونکہ ان کے پاس پیسے کی کوئی کمی نہیں ہے۔

پریس سے خطاب کرتے ہوئے کانگریس نے لیڈر نے مزید کہا کہ ’’گزشتہ 50 سالوں میں اتنی بے روزگاری کبھی نہیں تھی اور یہ لگاتار بڑھتی ہی جا رہی ہے۔ اعداد و شمار بتاتے ہیں کہ دنیا میں جتنی بے کاری ہے، اس سے دوگنی بے روزگاری ہمارے ملک میں ہے۔ یہی فکر ملک کے لوگوں کو کھائے جا رہی ہے۔‘‘

ملک کی معیشت کی بگڑتی حالت کو لے کر بھی غلام نبی آزاد نے میٹنگ کی باتیں پریس کے سامنے رکھیں۔ انھوں نے کہا کہ ملک کی معاشی سمت و رفتار کی طرف حکومت کا کوئی دھیان نہیں ہے۔ کس طرح ان 6 سالوں میں ملک کی جی ڈی پی نیچے گرتی جا رہی ہے۔ انھوں نے کہا کہ ’’ملک میں کور سیکٹر کی گروتھ لگاتار گرتی جا رہی ہے۔ این پی اے 8 لاکھ کروڑ تک پہنچ گئے ہیں۔ بی جے پی کی حکومت میں 25000 بڑے بینک فراڈ ہوئے۔ اگلے چار سالوں تک اگر یہی چلتا رہا تو ریزرو بینک بھی سڑک پر آ جائے گا۔‘‘

کسانوں کی حالت کو لے کر کانگریس لیڈر نے کہا کہ زراعت کی مشینوں پر جی ایس ٹی لگایا جا رہا ہے، ایسے میں ملک کے کروڑوں کسان خودکشی نہیں کریں گے تو کیا کریں گے۔ اس کے علاوہ جی ایس ٹی کو لے کر بھی غلام نبی آزاد نے رد عمل ظاہر کیا۔ انھوں نے کہا کہ ’’جی ایس ٹی کی شروعات کانگریس کے وقت میں ہوئی تھی، لیکن یہ اسی طرح ہوا جس طرح ایک مریض کو ڈاکٹر آپریشن کی تاریخ دیتا ہے اور اس کے بعد ڈاکٹر کا ٹرانسفر ہو جاتا ہے تو مقررہ تاریخ پر کمپاؤنڈر مریض کا علاج کر دیتا ہے۔ اسی طرح جی ایس ٹی کے ساتھ بھی ہوا۔‘‘

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔


next