سوشانت کیس: فلمساز سندیپ کا کردار مشکوک، بی جے پی سے تعلقات کی جانچ کرے سی بی آئی... کانگریس

کانگریس نے کہا ہے کہ اداکار سوشانت سنگھ کی موت کی تحقیقات کے سلسلے میں فلمساز سندیپ سنگھ کا کردار بھی مشکوک نظر آتا ہے اور اس سے بی جے پی کی ساز باز کی وسیع تحقیقات ضروری ہے

تصویر سوشل میڈیا
تصویر سوشل میڈیا
user

یو این آئی

نئی دہلی: کانگریس نے کہا ہے کہ اداکار سوشانت سنگھ کی موت کی تحقیقات کے سلسلے میں مرکزی تفتیشی بیورو (سی بی آئی) کی بے قراری کی وجہ سمجھ میں نہیں آرہی ہے، لیکن اس معاملے میں فلمساز سندیپ سنگھ کا کردار بھی مشکوک نظر آتا ہے اور اس کی بھی وسیع تحقیقات ضروری ہے۔

کانگریس کے ترجمان ابھیشیک منو سنگھوی نے اتوار کے روز یہاں ایک خصوصی پریس کانفرنس میں کہا کہ جو حقائق سامنے آئے ہیں، ان سے یہ بات واضح ہے کہ سندیپ سنگھ بھارتیہ جنتا پارٹی کے رہنماؤں کے قریبی شخص ہیں اور ان کے تعلقات کی وجہ سے انھیں بچایا جارہا ہے۔


انہوں نے کہا کہ یہ وہی شخص ہے جس نے گزشتہ سال عام انتخابات سے قبل وزیر اعظم نریندر مودی پر ایک فلم تیار کی تھی، اس وقت اس کی ریلیز کے معاملے میں کافی تنازعہ کھڑا ہوا تھا۔ انہوں نے کہا کہ سوشانت کی موت کے بعد سندیپ سنگھ نے ممبئی میں بی جے پی کے دفتر میں 53 بار فون کیا۔ اس سے یہ بات واضح ہے کہ اس کا بی جے پی کے بڑے لیڈروں سے رشتہ ہے اور وہ ان سے بات کرنے کے لیے ہی بی جے پی کے دفتر میں فون کرتا تھا۔

ترجمان نے کہا کہ یہ جانچ ہونی چاہئے کہ اداکار کی موت میں سندیپ سنگھ کا کوئی کردار تو نہیں تھا۔ اس کے بی جے پی کے لیڈروں سے روابط ہیں، جو انہیں حفاظتی حلقہ فراہم کررہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ سی بی آئی کو خود سندیپ سنگھ سے اس کے مشتبہ کردار کے بارے میں پوچھ گچھ کرنی چاہئے اور کون اس کو تحفظ فراہم کر رہا ہے اس کا بھی انکشاف کیا جانا چاہئے۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔