مہنگائی اور بے روزگاری کے خلاف کانگریس کا پرزور احتجاج، پولیس کارروائی پر لیڈران کا شدید ردعمل

پی چدمبرم نے کہا ’’یہ احتجاج مہنگائی، بےروزگاری اور اگنی پتھ کے خلاف ہے، مہنگائی سب کو متاثر کرتی ہے، ایک سیاسی جماعت اور منتخب نمائندے کی حیثیت سے ہم عوام کے لیے آواز اٹھانے کے پابند ہیں‘‘

تصویر قومی آواز / وپن
تصویر قومی آواز / وپن
user

قومی آوازبیورو

نئی دہلی: مہنگائی، بے روزگاری، جی ایس ٹی کے غلط نفاذ، اگنی پتھ اسکیم سمیت عوام کو درپیش متعدد مسائل کے خلاف کانگریس کا شدید احتجاج جاری ہے۔ اس دوران کانگریس کے سابق صدر راہل گاندھی، پارٹی کی جنرل سیکریٹری پرینکا گاندھی اور سابق وزیر ششی تھرور سمیت متعدد لیڈران کو حراست میں لے لیا گیا۔

راہل گاندھی سمیت کانگریس کے متعدد ارکان پارلیمنٹ کو اس وقت حراست میں لیا گیا جب وہ پارلیمنٹ ہاؤس سے راشٹرپتی بھون تک مارچ نکالنے کی کوشش کر رہے تھے۔ جبکہ پرینکا گاندھی کو کانگریس ہیڈکوارٹر کے باہر مارچ نکالنے کی کوشش کے دوران حراست میں لیا گیا۔


کانگریس پارٹی کے پُر امن احتجاج پر پولیس کی جابرانہ کارروائی پر پارٹی لیڈران نے شدید رد عمل کا اظہار کیا ہے۔ سابق مرکزی وزیر اور کانگریس کے سینئر لیڈر پی چدمبرم نے کہا کہ یہ احتجاج مہنگائی اور اگنی پتھ کے خلاف ہے، مہنگائی سب کو متاثر کرتی ہے۔ ایک سیاسی جماعت اور منتخب نمائندے کی حیثیت سے ہم عوام کے بوجھ کے خلاف آواز اٹھانے کے پابند ہیں۔

کانگریس کے رکن پارلیمنٹ ششی تھرور نے کہا کہ ہم عوام کو راستے پر آ کر یہ دکھانا چاہتے ہیں کہ حکومت مہنگائی اور بے روزگاری کے حوالہ سے جو کچھ بھی کہہ رہی ہے وہ درست نہیں ہے۔ ہم یہ دکھانے کے لیے آزاد ہیں۔ ایک بار ایوان میں مہنگائی پر بحث ہوئی تھی لیکن حکومت نے یہ اعتراف کرنے سے ہی انکار کر دیا کہ ملک میں مہنگائی چل رہی ہے، ایک بار بازاروں میں جا کر دیکھ لیں کہ مہنگائی کہاں پہنچ گئی ہے۔


وہیں، کانگریس /کے قومی جنرل سیکریٹری اجے ماکن نے کہا کہ مہنگائی اور بے روزگاری اپنے عروج پر ہیں۔ کانگریس پارٹی مہنگائی اور بے روزگاری کے خلاف ملک بھر میں احتجاج کر رہی ہے۔ ہمیں نظر بند کیا جا رہا ہے۔ افسوس کی بات ہے کہ ہم ستیہ گرہ بھی نہیں کر سکتے۔

راجیہ سبھا میں قائم حزب اختلاف ملکارجن کھڑگے نے کہا کہ ہم مہنگائی، بے روزگاری، جی ایس ٹی کی شرح میں اضافہ اور دیگر مسائل کے خلاف پرامن احتجاج کر رہے ہیں۔

کانگریس کے رکن پارلیمنٹ پرمود تیواری نے کہا کہ اڈانی دنیا کے سب سے امیر ہوتے جا رہے ہیں اور ملک غریب تر ہوتا جا رہا ہے۔ میں سیاہ کپڑے پہن کر آیا ہوں تاکہ ان (حکومت) کو کچھ عقل آئے۔ حکومت پارلیمنٹ میں بحث کرائے، اس لے ہم صدر کے پاس جا رہی ہے۔


پارْتی کے رکن پارلیمنٹ منیش تیواری نے کہا کہ آج لوگ مہنگائی کے دباؤ میں پسے جا رہے ہیں لیکن اس حکومت کو کوئی پرواہ نہیں ہے۔ سلمان خورشید نے کہا کہ یہ واضح ہے کہ ہم اس ملک کے عوام پر حملوں کے لیے لڑ رہے ہیں۔ یہ لڑائی طویل ہے اور ہم لڑتے رہیں گے۔ بے روزگاری اور مہنگائی ہمارے مسائل ہیں۔

کانگریس کے رکن پارلیمنت راجیو شکلا نے کہا کہ ہم راشٹرپتی بھون تک مارچ کرنے کی کوشش کر رہے ہیں لیکن پولیس نے دفعہ 144 کا حوالہ دیتے ہوئے ہمیں روک دیا ہے۔ ہم تمام ارکان پارلیمنٹ گرفتاری دیں گے۔ ہم عوام کو بے روزگاری اور مہنگائی سے راحت دلا کر رہیں گے۔

Follow us: Facebook, Twitter, Google News

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔