اتر پردیش: 20 سالہ لڑکے نے موبائل پر ریکارڈ کیا اپنی موت کا لمحہ

اتر پردیش میں ایک حیران کرنے والا واقعہ سامنے آیا ہے جس میں ایک شخص پنکج کمار نے ہانپتے ہوئے اپنی موت کے لمحات کو 80 سیکنڈ پر مبنی ویڈیو میں قید کر دیا ہے۔

علامتی تصویر
علامتی تصویر
user

تنویر

اتر پردیش میں ایک حیران کرنے والا واقعہ سامنے آیا ہے جس میں پنکج کمار نامی ایک شخص نے ہانپتے ہوئے اپنی موت کے لمحات کو موبائل میں قید کر لیا۔ 80 سیکنڈ کے اس ویڈیو میں پنکج نے ان سبھی کا نام لیا ہے جنھوں نے اسے زہر دیا تھا۔ یہ واقعہ بدھ کے روز سہارنپور میں پیش آیا۔ ویڈیو سے ظاہر ہوتا ہے کہ مبینہ ملزم اس کے خاندان کا ہی رکن ہے۔

پنکج کی لاش ایک کھیت میں اسی جگہ کے آس پاس ملی جہاں اس نے ویڈیو شوٹ کیا تھا۔ سہارنپور کے کوتوالی دیہات اسٹیشن ہاؤس افسر (ایس ایچ او) منیندر سنگھ نے کہا کہ "پنکج کی چاچی، ان کی دو بیٹیوں اور بہو پر مقدمہ درج کیا گیا ہے۔ موت کی وجہ اب تک غیر مصدقہ ہے اور جانچ کی کارروائی کے لیے ویسرا کے نمونے محفوظ کیے گئے ہیں۔"

ایس ایچ او کا کہنا ہے کہ پہلی نظر میں یہ خاندانی تنازعہ کا معاملہ معلوم پڑ رہا ہے۔ 20 سالہ پنکج اپنی چاچی کے گھر میں گزشتہ چار سالوں سے رہ رہا تھا۔ ویڈیو میں پنکج کو انصاف کی اپیل کرتے ہوئے بھی دیکھا جا سکتا ہے اور وہ اپنی لاش کی آخری رسومات تبھی ادا کرنے کی بات کر رہا ہے جب کہ اس کے مجرمین کی گرفتاری ہو جائے۔

پنکج ویڈیو میں کہہ رہا ہے کہ "میں اس ویڈیو کو فیس بک پر ڈال رہا ہوں۔ میں پولس محکمہ سے گزارش کرتا ہوں کہ وہ سبھی میرے جسم کو سپردِ آتش کرنے سے پہلے میرے ساتھ ایسا کرنے والوں کو گرفتار کریں۔" سوشل میڈیا پلیٹ فارم پر جمعرات کو ویڈیو سامنے آیا تھا جس کے بعد پولس حرکت میں آئی اور سہارنپور کے سرساواں پولس اسٹیشن میں ایف آئی آر درج کی گئی۔ بعد میں اسے کوتوالی دیہات تھانہ میں منتقل کر دیا گیا۔ سہارنپور کے پولس سپرنٹنڈنٹ ونیت بھٹناگر کا کہنا ہے کہ "کوتوالی دیہات پولس اسٹیشن میں قتل کا معاملہ درج کیا گیا ہے اور جانچ شروع ہو گئی ہے۔"

next