مایاوتی نے کیا اسکولی بچوں کی فیس معافی کا مطالبہ

مایاوتی نے کہا کہ شدید بحران کے شکار لوگوں کے سامنے بچوں کی فیس جمع کرنے کا مسئلہ پیدا ہوگیا ہے، اب وہ احتجاجی مظاہرہ کر رہے ہیں جس کی وجہ سے انہیں پولیس کے ڈنڈے کھانے پڑ رہے ہیں جوتکلیف دہ ہے

بی ایس پی صدر مایاوتی
بی ایس پی صدر مایاوتی
user

یو این آئی

لکھنؤ: بہوجن سماج پارٹی (بی ایس پی) سپریمو مایاوتی نے وسیع تر مفاد عامہ میں مرکزی و ریاستی حکومتوں سے اپنے شاہی خرچے میں کٹوتی کرکے سرکاری اور پرائیویٹ اسکولوں کے بچوں کی اسکولی فیس معاف کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ کورونا وائرس کے دور میں لاک ڈاؤن سے ملک میں اقتصادی کساد بازاری کی وجہ سے شدید بے روزگاری اور زندگی میں کافی بحران جھیل رہے کروڑوں لوگوں کے سامنے بچوں کی فیس جمع کرنے کے مسائل بے حد سنگین ہیں۔ جس کی وجہ سے لوگوں کو کئی جگہ اب احتجاجی مظاہرہ وغیرہ کے طور پر سامنے آنا پڑ رہا ہے۔ اس دوران لوگوں کو پولیس کے ڈنڈے کھانے پڑ رہے ہیں جو کافی تکلیف دہ ہے۔

مایاوتی نے ہفتہ کو اپنے ٹوئٹ میں لکھا 'کورونا لاک ڈاؤں سے متاثر ملک کی اقتصادی کساد بازاری سے بے تحاشہ بے روزگاری میں اضافہ ہوا ہے اور زندگی میں شدید بحران کے شکار لوگوں کے سامنے بچوں کی فیس جمع کرنے کا مسئلہ سنگین ہوکر اب احتجاجی مظاہرہ وغیرہ کے طور پر سامنے آرہا ہے۔ اور انہیں پولیس کے ڈنڈے کھانے پڑ رہے ہیں جو کافی تکلیف دہ ہے'

انہوں نے کہا 'ایسے ایکٹ آف گاڈ' کے وقت آئین کے مطابق حکومت کو فلاحی ریاست ہونے کا کردار خاص طور سے کافی بڑھ جاتا ہے۔ مرکزی و ریاستی حکومتوں کو اپنے شاہی خرچ میں کٹوتی کر کے سرکاری وپرائیویٹ اسکول کی فیس کی ادائیگی کریں یا وسیع تر مفاد میں بچوں کی اسکولی فیس معاف کریں'۔

next