انکم ٹیکس کے چھاپے میں 1.95 کروڑ روپے نقد ضبط

سرچ آپریشن سے تقریبا 7 کروڑ روپے کی جائیدادوں میں بے حساب سرمایہ کاری کا انکشاف ہوا ہے۔ مزید برآں، سرچ آپریشن میں 1.95 کروڑ روپے کی بے حساب نقدی اور 65 لاکھ روپے کے زیورات ضبط کیے گئے ہیں۔

انکم ٹیکس، تصویر آئی اے این ایس
انکم ٹیکس، تصویر آئی اے این ایس
user

یو این آئی

نئی دہلی: محکمہ انکم ٹیکس کی جانب سے کئی ریاستوں میں چھاپہ ماری میں 1.95 کروڑ روپے نقد اور 65 لاکھ روپے کے زیورات ضبط کیے گئے ہیں، محکمہ نے آج یہاں بتایا کہ 12 اکتوبر کو تلاشی اور ضبطی کی کارروائی شروع کی تھی پہلا معاملہ ڈیجیٹل مارکیٹنگ اور مہم انتظامیہ سے جڑا ہوا ہے جس میں بنگلور، سورت، چنڈی گڑھ اور موہالی میں واقع سات احاطوں میں تلاشی مہم چلائی گئی ہے، پائے گئے شواہد سے پتہ چلتا ہے کہ یہ گروپ انٹری آپریٹر کا استعمال کرتے ہوئے رہائش کے اندراجات حاصل کرنے سے منسلک ہے۔ انٹری آپریٹر نے حوالہ آپریٹرز کے ذریعے گروپ کی نقد رقم اور بے حساب آمدنی کی منتقلی میں سہولت فراہم کرنے کا اعتراف کیا ہے۔

آمدنی کے اخراجات اور کم رپورٹنگ کو بھی دیکھا گیا ہے۔ یہ گروپ بے حساب نقد ادائیگیوں میں ملوث پایا گیا ہے۔ یہ بھی دیکھا گیا ہے کہ ڈائریکٹرز کے ذاتی اخراجات کو کاروباری اخراجات کے طور پر درج کیا گیا ہے۔ یہ بھی دیکھا گیا ہے کہ ڈائریکٹرز اور ان کے خاندانوں کے زیر استعمال لگژری گاڑیاں ملازمین اور انٹری فراہم کرنے والے کے نام پر خریدی گئی ہیں۔


جس دوسرے گروپ کی تلاشی لی گئی ہے وہ سولڈ ویسٹ مینجمنٹ میں شامل ہے جس میں سولڈ ویسٹ کلکشن، ٹرانسپورٹیشن، پروسیسنگ اور ڈسپوزل سروسز شامل ہیں اور بنیادی طور پر ہندوستانی بلدیات کو سروس فراہم کرتا ہے۔ تلاشی کے دوران مختلف متنازعہ دستاویزات، کھلے کاغذات اور ڈیجیٹل ثبوت ضبط کیے گئے ہیں۔ موصولہ شواہد سے پتہ چلتا ہے کہ یہ گروپ اخراجات اور ذیلی معاہدوں کے لیے جعلی بلوں کی بکنگ سے وابستہ ہے۔ ابتدائی تخمینہ کے مطابق اس طرح کے جعلی اخراجات 70 کروڑ روپے کے برابر ہیں۔

سرچ آپریشن سے تقریبا 7 کروڑ روپے کی جائیدادوں میں بے حساب سرمایہ کاری کا انکشاف ہوا ہے۔ مزید برآں، سرچ آپریشن میں 1.95 کروڑ روپے کی بے حساب نقدی اور 65 لاکھ روپے کے زیورات ضبط کیے گئے ہیں۔ دونوں گروپوں سے تفتیش جاری ہے۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔