نتیش حکومت کے خلاف آر جے ڈی کے مظاہرہ میں ہنگامہ

بہار میں آر جے ڈی کارکنان آج سڑک پر اتر کر مہنگائی، بے روزگاری اور جرائم سمیت دیگر ایشوز کو لے کر اسمبلی گھیراؤ کر رہے ہیں۔ اس دوران پولس اور آر جے ڈی کارکنان میں دھکا-مکی والے حالات پیدا ہو گئے۔

تصویر آئی اے این ایس
تصویر آئی اے این ایس
user

قومی آوازبیورو

بہار میں بڑھتے جرائم اور بے روزگاری کے ساتھ ساتھ دیگر عوامی مسائل کو لے کر آر جے ڈی نے سڑک پر اتر کر مظاہرہ کیا۔ پٹنہ میں آر جے ڈی نے نتیش حکومت کے خلاف مارچ نکالا جس میں ہنگامہ والے حالات پیدا ہو گئے۔ آر جے ڈی نے اپنا مارچ جے پی گولمبر سے شروع کیا اور اس دوران پولس نے آر جے ڈی کارکنان کو روکنے کی کوشش کی۔ پولس اور آر جے ڈی کارکنان میں دھکا-مکی والے حالات بھی پیدا ہو گئے۔ تیجسوی یادو اور تیج پرتاپ یادو کا کہنا ہے کہ پولس کے ذریعہ ان کا قتل کرنے کی کوشش کی جا رہی ہے۔ یہاں قابل ذکر ہے کہ آر جے ڈی نے بہار اسمبلی کا گھیراؤ کرنے کا ارادہ کیا ہوا ہے۔

تصویر یو این آئی
تصویر آئی اے این ایس
تصویر آئی اے این ایس
تصویر آئی اے این ایس
تصویر آئی اے این ایس
تصویر آئی اے این ایس
نتیش حکومت کے خلاف آر جے ڈی کے مظاہرہ میں ہنگامہ

اس سے قبل آر جے ڈی لیڈر تیجسوی یادو نے کہا کہ عظیم سماجوادی لیڈر رام منوہر لوہیا کا کہنا تھا کہ سڑک سونی ہو جائے تو ایوان آوارہ ہو جائے گا۔ پٹنہ میں تیجسوی نے منگل کے روز نامہ نگاروں سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ ’’آج مہاگٹھ بندھن میں شامل پارٹیاں اسمبلی گھیرنے کے لیے سڑک پر اتریں گی۔ بہار حکومت مفاد عامہ میں کام نہیں کر رہی ہے، اس لیے اسے آئینہ دکھانا ضروری ہے۔‘‘ انھوں نے مزید کہا کہ ان کی پارٹی اپوزیشن کا کردار نبھا رہی ہے اور حکومت سے مفاد عامہ کے ایشوز پر سوال کر رہی ہے۔


اس درمیان آر جے ڈی لیڈر اور سابق وزیر صحت تیج پرتاپ یادو نے اپنے ٹوئٹر ہینڈل سے ٹوئٹ کرتے ہوئے لکھا کہ ’’کان کھول کر سن لو، روک سکو تو روک لو۔ ہم نے اب یہ ٹھانا ہے، بے روزگار نوجوانوں کی چولہے سے لپٹی خواتین کو ان کا حق دلوانا ہے۔‘‘

غور طلب ہے کہ آر جے ڈی کے سینکڑوں کارکنان اور لیڈر پٹنہ کے گاندھی میدان واقع جے پی گولمبر پر جٹے ہوئے ہیں۔ انھیں وہیں روکنے کے لیے کثیر تعداد میں پولس کی تعیناتی کی گئی ہے۔ آر جے ڈی کارکنان نعرہ بازی کر رہے ہیں۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔