راجستھان: کورونا کی دوسری لہر کے درمیان گہلوت نے آکسیجن پروڈکشن بڑھانے کی ہدایت دی

اشوک گہلوت نے کہا کہ ضرورت کے نقطہ نظر سے حکومت ریاست کو میڈیکل آکسیجن کی ضرورت پوری کرنے کے لیے ’آتم نربھر‘ بنانے کی سمت میں کام کر رہی ہے۔

اشوک گہلوت، تصویر یو این آئی
اشوک گہلوت، تصویر یو این آئی
user

یو این آئی

جے پور: راجستھان کے وزیراعلیٰ اشوک گہلوت نے عالمی وبا کورونا کی دوسری لہر کے دوران آکسیجن کی زیادہ ضرورت کے پیش نظر ریاست میں زیادہ سے زیادہ آکسیجن پلانٹ لگانے اور کنسٹریٹر وغیرہ آلات کی خریداری کا فوری طور پر منصوبہ بنا کر اسے متعینہ وقت میں نافذ کرنے کی ہدایت دی ہے۔ اشوک گہلوت پیر کی رات ویڈیو کانفرنس کے ذریعے سے کووڈ- 19، آکسیجن گیس اور کنسٹریٹر، ٹینکروں کی دستیابی سمیت دیگر اہم موضوعات پر اعلیٰ سطحی جائزہ لے رہے تھے۔ انہوں نے کہا کہ ضرورت کے نقطہ نظر سے حکومت ریاست کو میڈیکل آکسیجن کی ضرورت پوری کرنے کے لیے ’آتم نربھر‘ بنانے کی سمت میں کام کر رہی ہے۔

انہوں نے کہا کہ صحت اور محکمہ طبی تعلیم کے ساتھ ساتھ صنعت، شہری ترقیات، سیلف گورننس یونٹ اور ضلع انتظامیہ نئے آکسیجن پلانٹ قائم کرنے یا کروانے اور آکسیجن کنسنٹریٹر کی خریداری کے لیے کوآرڈینیشن کی کوشش کارآمد ثابت ہو سکتی ہے۔ ان کی جلد از جلد خریداری کی جائے اور درآمد کرنے کے لیے بیرون ملک میں واقع ہندوستانی سفارت خانوں کا بھی تعاون لیا جائے۔ یہ بھی یقینی بنایا جائے کہ شیپنگ اور دیگر وجوہات سے ان کے پہنچنے میں تاخیر نہ ہو۔


اشوک گہلوت نے ہدایت دی کہ افسران جام نگر اور بھیواڑی سے ملنے والی آکسیجن گیس کی سپلائی کو جلد از جلد اسپتالوں تک پہنچانے سے متعلق کمپنیوں کے افسران کے ساتھ مسلسل رابطہ قائم رکھیں تاکہ جام نگر سمیت دیگر دور افتاد مقامات سے آکسیجن کا جلد اٹھاؤ بھی ممکن ہو سکے۔ انہوں نے بتایا کہ پیر کے روز مرکزی وزیر داخلہ امت شاہ نے فون پر ریاست کو آکسیجن کے اٹھاؤ کے لیے اضافی ٹینکر مہیا کروانے کی یقین دہانی کروائی ہے۔

شہری ترقیات کے وزیر شانتی دھاریوال نے بتایا کہ ریاست کے بڑے شہروں میں محکمہ شہری ترقیات اور یو آئی ٹی کے ذریعے سے آکسیجن پلانٹ قائم کرنے کے امکانات ڈھونڈے جا رہے ہیں۔ کچھ جگہ تو اس کے لیے زمین کی بھی نشاندہی کر لی گئی ہے۔ آنے والے دنوں میں متعلقہ محکموں کے ساتھ کوآرڈینیشن کرکے پلانٹ قائم کرنے کے لیے ہدایات جاری کیے جائیں گے۔ انہوں نے بتایا کہ محکمہ سیلف گورننس عوام کو کووڈ ڈسپلن کے تئیں بیدار کرنے اور ماسک تقسیم کے کاموں میں مزید تیزی لائے گا۔


وزیر صحت ڈاکٹر رگھو شرما نے نئے آکسیجن پلانٹ ممکن ہو، ضلع اسپتالوں کے آس پاس قائم کرنے کا مشورہ دیا۔ انہوں نے کہا کہ ایسا کرنے میں آکسیجن کی نقل و حمل میں لگنے والے وقت کی بچت ہوگی اور اسپتال میں پائپ کے ذریعے سے آکسیجن کی سپلائی کی جا سکے گی۔ وزیر مملکت برائے صحت ڈاکٹر سبھاش گرگ نے آر یو ایچ ایس میں داخل اضافی کووڈ مریضوں کو ایس ایم ایس اسپتال میں منتقل کرنے کے عمل کو زیادہ آسان بنانے کا مشورہ دیا تاکہ مریضوں کو شفٹ ہونے میں آسانی ہو۔

چیف سکریٹری نرنجن آریہ نے بتایا کہ مرکزی ہوم سکریٹری اور ہیلتھ سکریٹری نے مرکزی حکومت کی جانب سے راجستھان کے لیے آکسیجن کا کوٹہ بڑھانے کے اشارے دیئے ہیں۔ انہوں نے بڑھے ہوئے کوٹے کی سپلائی جام نگر سے کرنے کا مطالبہ کیا ہے اور ریلائنس انڈسٹریز کے افسران کے ساتھ اس پلانٹ سے زیادہ سپلائی کرنے کے موضوع پر گفتگو کی ہے۔ انہوں نے بتایا کہ ریاست کے کچھ اسپتالوں میں مرکزی حکومت کی جانب سے آکسیجن پلانٹ لگائے جائیں گے۔ ساتھ ہی نویلی لگرائٹ کے ذریعے آکسیجن کنسنٹریٹر کے تعاون کی پیشکش بھی کی گئی ہے۔ کچھ کلیکٹروں سے کہا گیا ہے کہ وہ آکسیجن پلانٹ کے لیے زمین کی نشاندہی کریں۔


کانفرنس کے دوران بتایا گیا کہ کچھ کمپنیوں سے نائیٹروجن اور ایل این جی کے ٹینکر حاصل ہوئے ہیں۔ ان میں سے دو ٹینکر منتقل کروا کر ان سے آکسیجن کے اٹھاؤ کا کام شروع کر دیا گیا ہے۔ باقی ٹینکروں کو آکسیجن ٹرانسپورٹ کے لائق بنانے کے لیے ان کی بہتری کا عمل چل رہا ہے۔ اس کے علاوہ مغربی بنگال کے پاناگڑھ سے بھی چار اضافی ٹینکر لانے کی کوشش جاری ہے۔

ایڈیشنل چیف سکریٹری محکمہ صنعت کے سبودھ اگروال نے بتایا کہ چین اور روس سے کنسٹریٹر کی درآمد کے عمل کو حتمی شکل دی جا رہی ہے۔ دبئی اور ممبئی سے بھی کچھ فرموں سے کنسنٹریٹر کی درآمد کے عمل کو حتمی شکل دی جا رہی ہے۔ دبئی اور ممبئی سے بھی کچھ فرموں سے کنسنٹریٹر کی خریداری کے لیے بات کی جا رہی ہے۔ انہوں نے بتایا کہ رواں ماہ کے مئی کی آخر تک ریاست میں تقریباً 25 ہزار کنسنٹریٹر دستیاب ہو جائیں گے۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔