لوگ بدانتظامی سے مر رہے اور یوگی حکومت اپنی پیٹھ تھپتھپانے میں مصروف: پرینکا گاندھی

پرینکا گاندھی کا کہنا ہے کہ یو پی میں کورونا کے معاملہ خطرناک شکل اختیار کر چکے ہیں۔ لکھنؤ کے اسپتالوں کے سبھی بیڈ اور آئی سی یو بھرے ہوئے ہیں۔ یہاں پھیلی بدنظمی کی وجہ سے لوگوں کی جان جا رہی ہے۔

تصویر سوشل میڈیا
تصویر سوشل میڈیا
user

تنویر

ہندوستان میں کورونا انفیکشن کے پھیلاؤ نے خطرناک نظارہ پیش کیا ہے۔ حالات دن بہ دن بد سے بدتر ہوتے جا رہے ہیں۔ گزشتہ دو دنوں سے ملک میں 90 ہزار سے زائد مریض اس وبا کی زد میں آ رہے ہیں۔ حکومت بھی اس انفیکشن کو پھیلنے سے روکنے میں ناکام ثابت ہو رہی ہے۔ ایسا ہی حال بی جے پی حکمراں ریاست اتر پردیش کا ہے جہاں اب تک کورونا کے 2 لاکھ 66 ہزار 283 کیس سامنے آ چکے ہیں، لیکن یوگی حکومت اسے پھیلنے سے روکنے میں ناکام ثابت ہو رہی ہے۔

اتر پردیش کی حالت اتنی خراب ہے کہ اب یہ ریاست ہندوستان میں کورونا مریضوں کے معاملے میں پانچویں مقام پر ہے۔ ریاست میں اسپتال کی حالت بری ہو چکی ہے، بیڈ اور آئی سی یو بھرے ہوئے ہیں جس کی وجہ سے مریضوں کا مناسب علاج نہیں ہو پا رہا ہے۔ ان مشکل حالات میں بھی یو پی کے وزیر اعلیٰ یوگی آدتیہ ناتھ ایسے بیان دے رہے ہیں جسے سن کر سبھی حیران ہیں۔ کانگریس جنرل سکریٹری پرینکا گاندھی نے تو وزیر اعلیٰ کے بیان کو مضحکہ خیز ٹھہرایا ہے۔ پرینکا گاندھی نے ٹوئٹ کر کہا ہے کہ "یو پی میں کورونا کے معاملے خطرناک شکل اختیار کر چکے ہیں۔ لکھنؤ کے اسپتالوں کے سبھی بیڈ اور آئی سی یو فل ہیں۔ بدانتظامی کی وجہ سے لوگوں کی جانیں جا رہی ہیں۔ حکومت ان مسائل کا حل تلاش کرنے کی جگہ اپنی جھوٹی پیٹھ تھپتھپانے میں لگی ہے۔"

قابل ذکر ہے کہ پرینکا گاندھی نے اپنے ٹوئٹ کے ساتھ ایک خبر بھی شیئر کی ہے جس میں کہا گیا ہے کہ کورونا کو لے کر ریاست میں سب سے زیادہ بری حالت راجدھانی لکھنؤ کی ہے۔ لکھنؤ میں کورونا وائرس نے اب تک کی سب سے لمبی چھلانگ لگائی ہے۔ ہفتہ کے روز شہر میں پہلی بار ایک دن میں 1000 سے زیادہ مریض ملے۔ اس کے ساتھ ہی لکھنؤ پہلا ایسا ضلع بن گیا ہے جہاں ایک ساتھ کورونا کے اتنے کیس سامنے آئے ہوں۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔