کورونا کے بڑھتے کیسز کے درمیان ریلوے کے ذریعہ آکسیجن ایکسپریس دوبارہ چلانے کی تیاریاں

ریلوے بورڈ نے تمام ژونل جنرل منیجروں کو بتایا ہے کہ موجودہ حالات کے پیش نظر جائزہ لیا گیا اور رہنما خطوط کو مزید تین ماہ کے لیے بڑھا دیا گیا ہے۔

ریل، تصویر آئی اے این ایس
ریل، تصویر آئی اے این ایس
user

یو این آئی

نئی دہلی: ہندوستانی ریلوے نے ملک میں کورونا کے نئے ویریئنٹ اومیکرون کے بڑھتے ہوئے کیسز کے پیش نظر ضرورت پڑنے پر آکسیجن اور دیگر بڑے آلات کی فراہمی کے لیے کمر کس لی ہے۔ ریلوے بورڈ نے تمام ژونل جنرل منیجروں کو بتایا ہے کہ کرایوجینک ٹینکروں اور کنٹینرز، آکسیجن پلانٹس وغیرہ کی نقل و حمل سے متعلق ریلوے کے رہنما خطوط اور مائع میڈیکل آکسیجن (ایل ایم او) کی نقل و حمل کے لیے ریاستی حکومتوں کی فریٹ ایڈوانس اسکیم کے حوالہ سے ریلوے کے رہنما ہدایت 15 جنوری تک کے لیے تھے۔ لیکن موجودہ حالات کے پیش نظر اس کا جائزہ لیا گیا اور ان رہنما خطوط کو مزید تین ماہ کے لیے بڑھا دیا گیا ہے۔

ہندوستانی ریلوے نے اس سال 18 اپریل کو آکسیجن ایکسپریس کو ان ریاستوں تک پہنچانے کے لیے چلانا شروع کیا جہاں آکسیجن کی کمی تھی۔ تقریباً 480 آکسیجن ایکسپریس چلا کر 35000 ٹن سے زیادہ ایل ایم او کو 15 ریاستوں تک پہنچایا گیا۔ اس کے علاوہ ریلوے کے ذریعہ چار ہزار سے زیادہ کوچوں کو کووڈ کیئر کوچز میں تبدیل کیا گیا اور ملک کے متعدد شہروں میں اسٹیشنوں پر تعینات کیا گیا۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔