دہلی فساد: سازش کو انجام دینے کے لئے پانچ افراد کو ملے تھے 1.61 کروڑ! پولیس چارج شیٹ میں دعویٰ

چارج شیٹ میں کہا گیا ہے کہ مجموعی طور پر 1.61 کروڑ روپے میں سے 14801186 روپے نقد رقم نکال کر مظاہرے کے مقامات کے انتظام و انصرام کے لئے خرچ کیے گئے تھے۔

دہلی فسادات، فائل فوٹو
دہلی فسادات، فائل فوٹو
user

قومی آوازبیورو

نئی دہلی: دہلی پولیس نے فروری ماہ میں شمال مشرقی دہلی میں ہونے والے فسادات کے سلسلے میں عدالت میں دائر اپنی چارج شیٹ میں دعویٰ کیا ہے کہ شہریت ترمیمی قانون (سی اے اے) کے خلاف احتجاج کے مقامات پر انتظام و انصرام کرنے اور فرقہ وارانہ تشدد کی سازش کرنے کے لئے پانچ افراد نے مبینہ طور پر 1.61 کروڑ روپئے وصول کیے تھے۔

پولیس نے چارج شیٹ میں کہا ہے کہ سابق کونسلر عشرت جہاں، سماجی کارکن خالد سیفی، عام آدمی پارٹی کے کونسلر طاہر حسین، جامعہ ملیہ اسلامیہ ایلومنی ایسوسی ایشن کے صدر شفا الرحمن اور جامعہ کے طالب علم میران حیدر نے احتجاج کے مقامات کے انتظام اور مبینہ طور پر فروری میں دہلی فسادات کی سازش کرنے کے لئے 1.61 کروڑ روپئے وصول کیے تھے۔

واضح رہے کہ پولیس نے گزشتہ روز فروری میں شمال مشرقی دہلی میں فرقہ وارانہ تشدد کے معاملے میں 15 ملزمان کے خلاف چارج شیٹ داخل کی ہے۔ چارج شیٹ کے مطابق، "تفتیش کے دوران یہ انکشاف ہوا ہے کہ یکم دسمبر 2019 سے 26 فروری 2020 کے دوران ملزم عشرت جہاں، خالد سیفی، طاہر حسین، شفا الرحمن اور میران حیدر کو بینک اکاؤنٹ اور بطور نقد کل 16133703 (ایک کروڑ 61 لاکھ 33 ہزار 703) روپے موصول ہوئے تھے۔ "

چارج شیٹ میں کہا گیا ہے کہ مجموعی طور پر 1.61 کروڑ روپے میں سے 14801186 روپے نقد رقم نکال کر مظاہرے کے مقامات کے انتظام و انصرام کے لئے خرچ کیے گئے تھے۔

next