معیشت میں بہتری کے لیے ’مرہم‘ نہیں، سخت اقدامات کی ضرورت: کانگریس

مہنگائی میں اضافہ کے ساتھ ساتھ ملک کی برآمد اور درآمد میں کمی بھی آرہی ہے۔ مستحکم معیشت کے لئے برآمدات میں اضافہ ہی نہیں ہونا چاہیے بلکہ درآمد میں بھی اضافہ ہونا ضروری ہے۔

تصویر سوشل میڈیا
تصویر سوشل میڈیا
user

قومی آوازبیورو

نئی دہلی: کانگریس نے کہا ہے کہ لوگوں کی آمدنی اور خریدنے کی اہلیت کم ہونے کے ساتھ ہی صنعتی پیداوار، براہ راست ٹیکس، درآمدات۔برآمدات وغیرہ میں کمی کی وجہ سے معیشت بری صورت حال سے دوچار ہے اور بہتر ی کے لئے لیپا پوتی کرنے کے بجائے اب طویل مدتی سخت اقدام کرنے کی ضرورت ہے۔

کانگریس ترجمان سپریہ شری نیت نے پیر کو یہاں پارٹی ہیڈکوارٹر میں نامہ نگاروں کی کانفرنس میں کہا ہے کہ معیشت کی حالت نازک ہے اس لئے مہنگانی میں تیزی سے اضافہ ہورہا ہے اور مہنگائی کا براہ راست تعلق لوگوں کی آمدنی سے ہوتا ہے۔ اس سے واضح ہوتا ہے کہ معیشت کی حالت بہت خراب ہے اور اسے پٹری پر لانے کےلئے اب معیشت کی کمزور کڑی پر لیپا پوتی کرنے سے کام نہیں چلے گا بلکہ طویل مدتی بہتری کے اقدامات کرنے کی ضرورت ہوگی ۔

انہوں نےکہاہے کہ صرف مہنگائی میں اضافہ نہیں ہورہا ہے بلکہ ملک کی برآمد اور درآمد میں کمی آرہی ہے۔ کھپت میں ٹھہراؤ آگیا ہے۔ مستحکم معیشت کے لئے برآمدات میں اضافہ ہی نہیں ہونا چاہیے بلکہ درٓامد میں بھی اضافہ ہونا ضروری ہے۔درآمد اور برآمد میں اگر کمی آرہی ہے تو صاف ہے کہ معیشت کمزور ہورہی ہے۔ اس کا مطلب ہے کہ ملک میں پیداوار میں کمی آرہی ہے اور لوگوں کی خریداری کی اہلیت میں کمی آرہی ہے۔

ترجمان نے کہا کہ حکومت کو ملک کی معاشی صورت حال ٹھیک کرنے کے لئے سبھی معاشی پہلوؤں پر توجہ دینے کے ساتھ ہی کسان کی آمدنی پر خصوصی توجہ دینے کی ضرورت ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ کسان کی آمدنی بڑھائے بغیر کوئی بھی معیشت آگے نہیں بڑھ سکتی ہے۔

ملک میں کسان کی آمدنی آدھی ہوچکی ہے اس لئےبجٹ میں زر اعت اور کسان کی ترقی کےلئے نظم کرنا ضروری ہوگیا ہے۔ کانگریس لیڈر نے حکومت کے محصول میں کمی آنے پر افسوس کا اظہار کیا اور کہا ہے کہ یہ فکرمندی کی بات ہے کہ ملک میں براہ راست ٹیکس میں کمی آئی ہے۔ دو عشروں میں پہلی مرتبہ براہ راست ٹیکس میں گراوٹ آئی ہے۔

لوگ بے روزگار ہیں اور ان کی آمدنی نہیں ہورہی ہے اس لئے حکومت کے ٹیکس میں کمی آرہی ہے۔ آمدنی نہیں ہوگی تو ملک کے خزانہ میں کمی آنا طے ہے اس لئے حکومت کو لوگوں کی آمدنی میں اضافہ کرنے کے طریقے اپنانا چاہیے۔

next