مادری زبان کے تناظر میں نئی قومی تعلیمی پالیسی مہاتما گاندھی کی ’نئی تعلیم‘ کی پیروی: ونکیا نائیڈو

نائب صدر نے مہاراشٹر کے وردھا میں مہاتما گاندھی انٹرنیشنل ہندی یونیورسٹی کی سلور جوبلی تقریب سے آن لائن خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ہماری لسانی تنوع ہماری طاقت ہے۔

راجیہ سبھا کے چیئرمین وینکیا نائیڈو / آئی اے این ایس
راجیہ سبھا کے چیئرمین وینکیا نائیڈو / آئی اے این ایس
user

یو این آئی

نئی دہلی: نائب صدر ایم وینکیا نائیڈو نے منگل کو نوجوانوں سے قومی یکجہتی کو مضبوط کرنے کی سمت میں کام کرنے کی اپیل کرتے ہوئے کہا کہ نئی قومی تعلیمی پالیسی مادری زبان کے تناظر میں مہاتما گاندھی کی 'نئی تعلیم' کی پیروی کرتی ہے۔

نائب صدر نے مہاراشٹر کے وردھا میں مہاتما گاندھی انٹرنیشنل ہندی یونیورسٹی کی سلور جوبلی تقریب سے آن لائن خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ہماری لسانی تنوع ہماری طاقت ہے، ہماری زبانیں ہماری ثقافتی اتحاد کا اظہار کرتی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ لسانی اتحاد کو مضبوط کرنے کے لیے ہندوستانی زبانوں میں مکالمے کو بڑھانا چاہیے اور یونیورسٹیوں کے لینگویج ڈiپارٹمنٹس میں مسلسل مکالمہ اور رابطہ ہونا چاہیے۔


ایم وینکیا نائیڈو نے کہا کہ اظہار رائے کی آزادی کو ہمیں زبان کے وقار اور سماج کے نظم و ضبط کے اندر رہتے ہوئے استعمال کرنا چاہئے تاکہ سماج میں غیر ضروری تنازعات پیدا نہ ہوں۔ اس موقع پر یونیورسٹی کیمپس میں ڈاکٹر۔ بھیم راؤ امبیڈکر کے مجسمے کی نقاب کشائی اور اٹل بہاری واجپائی بھون اور چندر شیکھر آزاد ہاسٹل کا افتتاح کیا گیا۔

ایم وینکیا نائیڈو نے کہا کہ بیرون ملک میں پھیلے ہندی بولنے والے مہاجر ہندوستانی برادری اور ہندی بولنے والے ممالک کو ہندوستان سے جوڑے رکھنے میں ہندوستانی زبانوں کا اہم کردار ہے اور یونیورسٹیوں کو اس کی حوصلہ افزائی کرنی چاہئے۔ انہوں نے ہندی بولنے والے ممالک اور مہاجر ہندوستانی برادری کے ادیبوں کے ادبی کاموں کو یونیورسٹیوں میں دانشورانہ گفتگو میں شامل کرنے کو بھی کہا۔


انہوں نے کہا کہ ہندوستانی زبانوں میں ادب کا ترجمہ دوسری زبانوں میں بھی دستیاب کرایا جائے تاکہ نوجوان اسے پڑھ سکیں اوراس سے وابستگی محسوس کر سکیں۔ اس موقع پر سماجی انصاف اور امپاورمنٹ کے مرکزی وزیر مملکت رام داس اٹھاولے، وردھا کے ایم پی رام داس تڑس، وائس چانسلر پروفیسر۔ رجنیش کمار شکلا سمیت کئی معززین، یونیورسٹیوں کے اساتذہ اور طلباء موجود تھے۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔