یوگی حکومت سے ناراض مکیش سہنی نے بہار میں این ڈی اے کی میٹنگ کا کیا بائیکاٹ

مکیش سہنی نے نامہ نگاروں سے بات چیت میں کہا کہ وزیراعظم کی سوچ ہے سب کا ساتھ، سب کا ویکاس، لیکن وہ اترپردیش میں نہیں دکھا۔ یوگی جی نےغلط کیا ہے، اس وجہ سے میں این ڈی اے کی میٹنگ کا بائیکاٹ کر رہا ہوں۔

مکیش سہنی، تصویر آئی اے این ایس
مکیش سہنی، تصویر آئی اے این ایس
user

یو این آئی

پٹنہ: بیہڑ کے جنگلات سے پارلیمنٹ تک پہنچنے والی ڈاکو سرغنہ پھولن دیوی کی اتر پردیش میں مورتی لگانے کی اجازت نہیں ملنے سے ناراض ویکاس شیل انسان پارٹی ( وی آئی پی) کے قومی صدر اور بہار کے مویشی پروری کے وزیر مکیش سہنی نے آج وزیراعلیٰ نتیش کمار کی صدارت میں قومی جمہوری اتحاد ( این ڈی اے) کی ہوئی میٹنگ کا بائیکاٹ کیا۔

اجلاس کا بائیکاٹ کرنے کے بعد وزیر مکیش سہنی نے نامہ نگاروں سے بات چیت میں کہا کہ وزیراعظم کی سوچ ہے سب کا ساتھ، سب کا ویکاس، لیکن وہ اتر پردیش میں نہیں دکھا۔ یوگی جی نے غلط کیا ہے۔ اس وجہ سے میں این ڈی اے کی میٹنگ کا بائیکاٹ کر رہا ہوں۔ این ڈی اے میں ہیں تو سب کی بات سننی چاہیے۔ انہوں نے کہا کہ بہار میں وزیراعلیٰ نتیش کمار کی قیادت میں حکومت چل رہی ہے وہ حکومت کے ساتھ ہیں۔


غور طلب ہے کہ 243 رکنی بہار اسمبلی میں حکومت بنانے کے لئے کسی بھی پارٹی یا اتحاد کو 122 اراکین اسمبلی کی حمایت کی ضرورت ہے۔ بھارتیہ جنتا پارٹی ( بی جے پی) کے 74 اور جنتادل یونائٹیڈ کے 43 اراکین اسمبلی کو جوڑنے کے باوجود یہ تعداد پانچ کم رہ جاتی ہے۔ ایسے میں نتیش کمار کی قیادت والی اتحاد کو حکومت بنائے رکھنے کے لئے چار۔ چار اراکین والی وی آئی پی اور ہندوستانی عوام مورچہ (ہم) کو نظر انداز کرنا آسان نہیں ہے۔

اسی وجہ سے ہم اور وی آئی پی بی جے پی اور جے ڈی یو پر دباﺅ بنانے کا کوئی موقع نہیں چھوڑتی ہیں۔ اتر پردیش میں آئندہ سال ہونے والے اسمبلی انتخاب کو دیکھتے ہوئے وی آئی پی نے سابق رکن پارلیمنٹ پھولن دیوی کی 20ویں برسی کے موقع پر اتر پردیش کے 18 اضلاع میں مجسمہ لگانے کا اعلان کیا تھا، لیکن پولیس نے ماحول خراب ہونے کے اندیشے کو دیکھتے ہوئے ان مجسموں کو ضبط کرلیا اور اتوار کو مکیش سہنی کو اتر پردیش میں داخل نہیں ہونے دیا۔ اسی وجہ سے مکیش سہنی ناراض ہیں۔


بہار قانون ساز اسمبلی کے سموار سے شروع ہوئے مانسون سیشن میں حزب اقتدار کی حکمت عملی طے کرنے کے لئے وزیراعلیٰ نتیش کمار کی صدارت میں ہوئی این ڈی اے کی میٹنگ میں مکیش سہنی کو چھوڑ کر اتحاد کی دیگر حلیف جماعتیں جے ڈی یو، بی جے پی اور ہم شامل ہوئیں۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔