چین میں سخت کووڈ پابندیوں کے خلاف زبردست احتجاج، صدر شی جنپنگ کے استعفے کا مطالبہ

شنگھائی میں لاک ڈاؤن کی وجہ سے اپارٹمنٹ بلاک میں لگنے والی آگ میں ہلاکتوں کی تعداد کے خلاف احتجاج کے دوران لوگ "جنپنگ اسٹیپ ڈاون" اور "کمیونسٹ پارٹی اسٹیپ ڈاون" کے نعرے لگا رہے ہیں۔

تصویر آئی اے این ایس
تصویر آئی اے این ایس
user

قومی آوازبیورو

چین کے شنگھائی میں ایک اپارٹمنٹ بلاک میں آگ لگنے کے بعد چین میں کووِڈ پابندیوں کے خلاف مظاہروں میں شدت آتی دکھائی دے رہی ہے۔ مقامی میڈیا کے مطابق، ہزاروں افراد متاثرین کو یاد کرنے اور پابندیوں کے خلاف مظاہرہ کرنے کے لیے شنگھائی کی سڑکوں پر نکل آئے۔ بی بی سی کی رپورٹ کے مطابق اس دوران کئی لوگوں کو صدر شی جنپنگ کے استعفے کا مطالبہ کرتے سنا گیا۔ آگ لگنے سے ہونے والی ہلاکتوں کی وجہ فلیٹوں کے بلاکس میں نافذ لاک ڈاؤن ہے۔

چین کے سب سے بڑے شہر اور عالمی مالیاتی مرکز شنگھائی میں ہونے والے مظاہروں میں کچھ لوگوں کو موم بتیاں روشن کرتے اور متاثرین کے لیے پھول چڑھاتے ہوئے بھی دیکھا گیا۔ دیگر لوگوں کو شی جنپنگ، اسٹیپ ڈاون اور کمیونسٹ پارٹی، اسٹیپ ڈاون جیسے نعرے لگاتے سنا گیا۔ کچھ کے ہاتھوں میں خالی سفید بینر بھی تھے۔


بی بی سی نے اپنی رپورٹ میں بتایا کہ اس طرح کے مطالبات چین کے اندر ایک غیر معمولی منظر کی عکاسی کرتے ہیں، جہاں حکومت اور صدر پر براہ راست تنقید سخت سزاؤں کا باعث بن سکتی ہے۔ مظاہرے میں شامل ایک شخص کا کہنا تھا کہ وہ سڑکوں پر لوگوں کو دیکھ کر حیران ہے، لیکن خود کو تھوڑا پرجوش محسوس کر رہا ہے، اس نے مزید کہا کہ یہ پہلی بار ہے کہ اس نے چین میں اتنے بڑے پیمانے پر احتجاج دیکھا ہے۔

انہوں نے کہا کہ لاک ڈاؤن نے انہیں اداس، غصے اور مایوسی کا احساس دلایا ہے۔ لاک ڈاؤن کی وجہ سے وہ اپنی بیمار ماں کو نہیں دیکھ سکے، جو کینسر میں مبتلا تھی۔ ایک خاتون مظاہرین نے بی بی سی کو بتایا کہ جب پولیس افسران سے پوچھا گیا کہ وہ احتجاج کے بارے میں کیا سوچتے ہیں، تو انہوں نے کہا کہ آپ کی طرح ہم بھی سوچ رہے ہیں، لیکن وردی میں ہونے کی وجہ سے اسے اپنا کام کرنا پڑتا ہے۔

Follow us: Facebook, Twitter, Google News

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔


;