لو جہاد معاملہ: این آئی اے پہنچی بنگلہ دیش، لڑکی نے کسی ’زبردستی‘ سے کیا انکار!

بنگلہ دیش میں شوہر نفیس کے ساتھ رہ رہی لڑکی کا ایک بیان سامنے آیا ہے جس میں اس نے واضح لفظوں میں کہہ دیا ہے کہ اس کے ساتھ نہ کوئی زبردستی ہوئی اور نہ ہی اس نے کسی دباؤ میں اسلام مذہب اختیار کیا۔

تصویر آئی اے این ایس
تصویر آئی اے این ایس
user

تنویر

مبینہ لو جہاد کے ایک معاملے کی تفتیش کرنے این آئی اے کی ٹیم بنگلہ دیش پہنچ چکی ہے اور ایسی خبریں سامنے آ رہی ہیں کہ لڑکی نے ان سے واضح لفظوں میں کہہ دیا ہے کہ اس کے ساتھ نہ ہی کوئی زبردستی ہوئی اور نہ ہی اس نے کسی دباؤ میں اسلام مذہب اختیار کیا ہے۔ انگریزی روزنامہ ’ہندوستان ٹائمز‘ میں شائع ایک خبر کے مطابق نام نہ شائع کرنے کی شرط پر ایک ذرائع نے بتایا کہ لڑکی نے این آئی اے سے کہہ دیا ہے کہ اس نے اپنی مرضی سے اسلام مذہب اختیار کیا ہے اور شوہر کے ساتھ خوشگوار زندگی گزار رہی ہے۔

دراصل تمل ناڈو میں ’لو جہاد‘ کا ایک معاملہ درج کیا گیا تھا جس کی تفتیش کے لیے این آئی اے کی ٹیم بنگلہ دیش پہنچی۔ معاملہ لڑکی کے والد نے درج کیا تھا اور ایف آئی آر میں الزام عائد کیا گیا تھا کہ ان کی بیٹی لندن میں پڑھائی کر رہی تھی جہاں ورغلا کر اس سے شادی کی گئی۔ لڑکی کے والد نے نفیس نامی شخص پر جبراً اسلام مذہب قبول کروانے اور لڑکی کو زبردستی لندن سے بنگلہ دیش لے جانے کا بھی الزام عائد کیا۔ حالانکہ لڑکی کا بیان پہلے بھی میڈیا میں سامنے آ چکا ہے جس میں اس نے واضح لفظوں میں کہا کہ وہ اپنے شوہر نفیس کے ساتھ خوشحال زندگی گزار رہی ہے اور اپنی مرضی سے ان کے ساتھ ہے۔

قابل ذکر ہے کہ نفیس سابق بنگلہ دیشی وزیر اعظم خالدہ ضیاء کی پارٹی بنگلہ دیش نیشنلسٹ پارٹی سے منسلک ایک سینئر اپوزیشن لیڈر سردار شیخاوت حسین کے بیٹے ہیں۔ نفیس اور لڑکی دونوں لندن میں ساتھ پڑھائی کر رہے تھے جب ان کی آپس میں محبت ہو گئی اور پھر وہ رشتہ ازدواج میں منسلک ہو گئے۔ لو جہاد کا کیس درج ہونے کے بعد اس معاملے نے طول پکڑا اور تمل ناڈو پولس نے این آئی سے اس معاملے کی جانچ کرنے کے لیے کہا۔ چونکہ معاملہ بین الاقوامی اثر والا تھا اس لیے این آئی اے نے تفتیش کی ذمہ داری سنبھالی اور اس کی ٹیم سچ جاننے کے لیے بنگلہ دیش پہنچ گئی۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔


Published: 16 Jan 2021, 7:10 PM
next