’خان چاچا ریسٹورینٹ‘ پر نونیت کالرا نے دھوکہ سے قبضہ کیا تھا!

اللہ بندہ کے بیٹوں کا کہنا ہے کہ ’’ہمارے والد تعلیم یافتہ نہیں تھے۔ نونیت کالرا نے جو پارٹنرشپ کے کاغذ بتاکر والد صاحب سے دستخط کرائے تھے اس میں نونیت نے خان چاچا کا نام خرید لیا تھا۔‘‘

تصویر آئی اے این ایس
تصویر آئی اے این ایس
user

قومی آوازبیورو

سہارنپور: چند روز پہلے دہلی میں جو پولس نے خان چاچا ریسٹورینٹ کے یہاں چھاپہ مار کر 96 آکسیجن کنسنٹریٹر برآمد کیے تھے اس ریسٹورینٹ پر اب نونیت کالرا کا قبضہ ہے۔ پچھلے 5 سالوں سے خان چاچا کا اس ریسٹورینٹ سے کوئی تعلق نہیں ہے۔ میڈیا بلا وجہ خان چاچا کو بدنام کر رہا ہے۔ خان چاچا ریسٹورینٹ کے مالک سہارنپور کے رہنے والے تھے جو برسوں پہلے سہارنپور سے دہلی ہجرت کر گئے تھے۔

اس سلسلہ میں سہارنپور میں رہنے والے نواب انصاری نے جانکاری دیتے ہوئے بتایا کہ میرے بہنوئی کے بھائی اللہ بندہ انصاری جو سہارنپور کے محلہ شاہ مدار کے رہنے والے ہیں۔ ان کے والد کی سبزی کی دکان تھی۔ اللہ بندہ بھی اسی دکان پر جایا کرتے تھے۔ لگ بھگ 40 برس قبل روزگار کی تلاش میں اللہ بندہ دہلی چلے گئے جہاں انہوں نے جاکر سیخ کباب اور تہری وغیرہ بناکر فروخت کرنا شروع کی۔ کام چل نکلا اور ایک انصاری برادری سے تعلق رکھنے والے کو لوگوں نے خان چاچا کا نام دے دیا۔ نام بھی مشہور ہوگیا اور ان کی تہری وغیرہ بھی مشہور ہوگئی۔


انہوں نے خان چاچا کے نام سے ہی اپنا کاروبار کیا جو کافی بڑھ گیا۔ حاجی اللہ بندہ کے بیٹے سلیم اور جاوید نے بتایا کہ ہمارے والد نے دہلی کے رہنے والے نونیت کالرا سے 2016 میں پارٹنر شپ کی۔ اس نے والد صاحب کو سبز باغ دکھائے اور کہا کہ میں جگہ جگہ خان چاچا کے نام سے کام کروں گا اور اس سے کافی کمائی ہوگی۔ سلیم نے بتایا کہ مگر سچائی یہ ہے کہ نونیت کالرا کی نیت پہلے سے ہی خراب تھی۔ ہمارے والد تعلیم یافتہ نہیں تھے۔ اس نے جو پارٹنرشپ کے کاغذ بتاکر والد صاحب سے دستخط کرائے تھے اس میں نونیت کالرا نے خان چاچا کا نام خرید لیا تھا۔ اس بات کا پتہ 2016 میں ہوا جب نونیت نے کمائی دینے سے انکار کر دیا اور کہا کہ میں تو مالک ہوں اور میری کوئی پارٹنر شپ نہیں ہے۔ میں نے آپ سے ٹائیٹل خریدا تھا، تم اپنا نام بیچ چکے ہو۔

معاملہ عدالت میں چلا اور اس طرح نونیت کالرا نے پوری طرح خان چاچا کے کام پر قبضہ کر لیا۔ سلیم کے بھائی جاوید نے بتایا کہ جہاں پولس نے چھاپہ مارا وہ جگہ بھی نونیت کالرا کی ہے، ہمارا اس سے کوئی لینا دینا نہیں ہے۔ انہوں نے بتایا کہ والد صاحب بیمار رہتے ہیں اور ہم دوبنوں بھائیوں نے دہلی میں ہی سلیم جاوید کے نام سے ہوٹل کھول رکھا ہے۔

(بشکریہ شبیر شاد)

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔