کیرالہ: سیاستدانوں کا قتل، الاپوزا ضلع میں پیر تک حکم امتناعی نافذ

سابق اپوزیشن لیڈر اور کانگریس کے سینئر لیڈر رمیش چنیتھلا نے الزام لگایا کہ سیاست دانوں کے قتل سے پولیس کے لا اینڈ آرڈر کی بدترصورت حال ظاہر ہوتی ہے۔

تصویر بشکریہ این ڈی ٹی وی
تصویر بشکریہ این ڈی ٹی وی
user

یو این آئی

الاپوزا: کیرالہ کے الاپوزا ضلع میں 12 گھنٹے سے بھی کم وقت میں دو سیاسی قتل نے ریاست کو ہلا کر رکھ دیا ہے۔ واقعہ کے بعد ضلع میں پیر تک حکم امتناعی نافذ کر دیا گیا ہے۔ ذرائع نے بتایا کہ بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) کے او بی سی مورچہ کے ریاستی سکریٹری اور سوشل ڈیموکریٹک پارٹی آف انڈیا (ایس ڈی پی آئی) کے سکریٹری کو 12 گھنٹے سے بھی کم وقت میں الاپوزا میں قتل کر دیا گیا ہے۔

بی جے پی لیڈر رنجیت سری نواسن کا مبینہ طور پر ایس ڈی پی آئی کارکنوں نے اتوار کو ان کی رہائش گاہ پر قتل کر دیا تھا۔ بی جے پی لیڈر کے قتل سے قبل ایس ڈی پی آئی لیڈر کے ایس شان کو ہفتہ کی رات قتل کر دیا گیا تھا۔


رپورٹ کے مطابق کے ایس شان کل رات اسکوٹر سے اپنے گھر جا رہے تھے کہ کار میں بیٹھے چار افراد نے اسکوٹر کو ٹکر مار دی۔ جس کے بعد کچھ حملہ آور گاڑی سے باہر آئے اور ایس شان پر تیز دھار سے حملہ کیا۔ اس واقعہ کے بعد سے زخمی حالت میں ایرناکولم کے ایک پرائیویٹ اسپتال لے جایا گیا، جہاں وہ زخموں کی تاب نہ لاکر چل بسے۔

وزیر اعلیٰ وجین نے ایک پیغام میں پولیس کو ہدایت دی ہے کہ قتل میں ملوث افراد کے خلاف سخت کارروائی کی جائے۔ وزیر اعلیٰ نے عوام پر زور دیا ہے کہ وہ جرائم پیشہ عناصر کے خلاف متحد ہو جائیں جو سماجی ہم آہنگی کو بگاڑنے کی کوشش کر رہے ہیں۔


کیرالہ اسمبلی میں اپوزیشن لیڈر وی ڈی ساتھیسن نے الزام لگایا کہ اس حملے کے پیچھے مذہب کی بنیاد پر لوگوں کو تقسیم کرنے کی کوشش تھی۔ سابق اپوزیشن لیڈر اور کانگریس کے سینئر لیڈر رمیش چنیتھلا نے الزام لگایا کہ سیاست دانوں کے قتل سے پولیس کے لا اینڈ آرڈر کی بدترصورت حال ظاہر ہوتی ہے۔

بی جے پی کے ریاستی صدر کے سریندرن نے سوشل ڈیموکریٹک پارٹی آف انڈیا (ایس ڈی پی آئی) اور پاپولر فرنٹ آف انڈیا (پی ایف آئی) پر الزام عائد کرتے ہوئے کہا کہ وہ دہشت گرد تنظیموں کی طرح کام کر رہے ہیں اور حکمران کمیونسٹ پارٹی آف انڈیا-مارکسسٹ (سی پی آئی ایم) کے رہنماؤں کی حمایت سے راشٹریہ سویم سیوک سنگھ اور بی جے پی کارکنوں کا قتل کر رہے ہیں۔ دریں اثنا، الاپوزا ضلع کی صورت حال کو دیکھتے ہوئے ضابطہ فوجداری کے تحت آج سے پیر تک کے لیے امتناعی احکامات نافذ کیے گئے ہیں۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔